جرمن خاتون ڈی پورٹ ہونیوالے نوجوان سے شادی کیلئے پاکستان پہنچ گئی

جرمن خاتون ڈی پورٹ ہونیوالے نوجوان سے شادی کیلئے پاکستان پہنچ گئی

گوجرانوالہ(مانیٹرنگ ڈیسک) جرمنی سے ڈی پورٹ ہونیوالے پاکستانی نوجوان سے شادی کیلئے 46سالہ جرمن خاتون پاکستان کے شہرگوجرانوالہ پہنچ گئی۔ تفصیلات کے مطابق عاطف رضوان اور جرمن خاتون ہائیکا جس نے اسلام قبول کرنے کے بعد اپنا نام فاطمہ رکھا۔عاطف رضوان نے بتایاکہ اس کی عمر اب 30سال ہے لیکن جب معاشقہ شروع ہواتو اس وقت عمر26سال تھی۔ایک سوال کے جواب میں عاطف رضوان نے بتایاکہ میرا وزن 60کلوگرام اور فاطمہ کا وزن 90کلوگرام ہے اور دو بچوں کی خواہش ہے۔ عاطف رضوان نے بتایاکہ وہ جرمن خاتون کو پیار کرتاہے اور وہ بھی بہت زیادہ پیار کرتی ہے ، جرمنی نے مجھے ڈی پورٹ کیا اور یہ میرے پیچھے یہاں آگئی۔عاطف رضوان نے بتایاکہ جب بھی فاطمہ (قبول اسلام سے پہلے کی مائیکا) کو بہت زیادہ پیار آئے تو پائے کھلانے کا مطالبہ کرتی ہے اور بڑے مزے سے کھاتی ہے۔ عاطف رضوان کے ہمراہ روزنامہ پاکستان سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے فاطمہ نے بتایاکہ پاکستانی کھانے بڑے مزید ار ہیں ، پائے میں سے ہڈیاں اور مکھ کھاکر بڑا مزا آتاہے ، ابھی بھی 90کلوگرام وزن ہے۔ عاطف نے بتایاکہ شادی کی سب رسومات ہوگئی ہیں ، گوری کو پھنسانے کے باوجود شادی کرنے میں ناکام ہونیوالے پاکستانیوں کو پیغام ہے کہ نیت ٹھیک رکھیں، اللہ خود ہی راہیں کھول دے گا۔ عاطف کے بڑے بھائی نے کلمہ طیبہ پڑھ کر بتایاکہ ہم نے بھابھی کو خوش آمدید کہا، سنت رسول ؐ ہے ، ہمارابھی اب جرمنی آنا جانا لگارہے گالیکن ہم وہاں منتقل نہیں ہوسکتے ، دنیا کو ہمارے پاس پاکستان آنا ہے ، بھابھی کو چڑے بھی کھلائے ہیں اور ہر وہ چیز کھارہی ہیں جو ہم کھاتے ہیں۔ عاطف رضوان نے بتایاکہ فاطمہ اچھی اور شریف عورت ہے ، پہلے بھی دوشادیاں ہوئی تھیں لیکن ناکام ہوگئیں ، ایک شوہرالجریا کا تھا اور ایک بھارتی ، جب میری ملاقات ہوئی تھی تو فاطمہ نے پہلی بات یہی کہ پہلے جو بھی مرد ملے ، ٹھیک نہیں تھے کیونکہ استعمال کرکے چھوڑدیالیکن جواب میں ایک ہی بات کی کہ پاکستانی ہوں ، دل والے لوگ ہیں اور کسی سے دھوکہ نہیں کرتے ، زندگی بھرساتھ دوں گا، شادی سے پہلے بھی کافی پیار کیا اور خاتون بھی پیار کرتی ہے۔

جرمن خاتون

مزید : صفحہ آخر


loading...