چین کے بغیر بھی شمالی کوریا کے مسئلے سے نمٹ لیں گے: ٹرمپ

چین کے بغیر بھی شمالی کوریا کے مسئلے سے نمٹ لیں گے: ٹرمپ

واشنگٹن ( نیٹ نیوز )امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ امریکہ چین کے ساتھ یا اس کے بغیر بھی شمالی کوریا کی جانب سے جوہری اسلحے کے خطرے کو حل کر لے گا۔فنانشل ٹائمز سے انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ اگر چین شمالی کوریا کا مسئلہ حل نہیں کرتا تو ہم کریں گے۔ ہم آپ سے کہہ رہے ہیں کہ ہم ایسا ہی کریں گے۔'جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا تنہا وہ اس کام کو انجام دینے میں کامیاب ہوں گے تو انھوں نے کہا 'مکمل طور پر'۔خیال رہے کہ ٹرمپ کا یہ انٹرویو چینی صدر شی جن پنگ کے رواں ہفتے ہونے والے امریکی دورے سے قبل آیا ہے۔ ٹرمپ نے کہا کہ چین کا شمالی کوریا پر بہت اثر و رسوخ ہے۔ چین کو یہ فیصلہ کرنا ہے کہ وہ شمالی کوریا سے نمٹنے میں ہماری مدد کرے گا یا نہیں۔ اگر وہ مدد کرتا ہے تو یہ چین کے لیے بہت اچھا ہوگا اور اگر وہ نہیں کرتا ہے تو یہ کسی کے لیے بھی اچھا نہیں ہوگا۔جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا اس کا مطلب 'ون آن ون' یکطرفہ ایکشن ہوگا تو ٹرمپ نے کہا: 'کلی طور پر، اور اب مجھے مزید کچھ نہیں کہنا۔انھوں نے اپنے ایکشن کے بارے میں مزید تفصیلات نہیں دیں۔ رمپ کے یہ بیانات چینی صدر سے ان کی مجوزہ ملاقات سے قبل آئے ہیں جو کہ شمالی کوریا کے جوہری اسلحے کے فروغ کے متعلق ان کی تازہ ترین وارننگ ہے۔دونوں ممالک کے صدور کی یہ ملاقات پہلے سے طے شدہ ہے اور یہ 'مار اے لیگو' میں ہوگی۔شمالی کوریا کے بارے میں یہ خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ وہ بالآخر طویل فاصلے تک مار کرنے کی صلاحیت رکھنے والے میزائل کا فروغ کر لے گا جو کہ امریکہ کو نشانہ بنا سکے۔امریکی صدر شمالی کوریا کے میزائل پروگرام پر سخت موقف رکھتے ہیں۔مارچ میں ایشا کے دورے میں امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹیلرسن نے کہا تھا کہ دشمن کو ناکام کرنے کے لیے پیش بندی طور پر کی جانے والی 'فوجی کارروائی زیر غور ہے۔'جنوبی کوریا نے چھ مارچ کو شمالی کوریا کے میزائل لانچ کو ٹی پر نشر کیا تھا۔خیال رہے کہ مارچ کے اخیر میں انھوں نے امریکی تجارت کے خسارے کو کم کرنے، جاری قوانین اور بیرون سے ہونے والی تجارت کی خامیوں کا جائزہ لینے کے لیے دو ایگزیکٹو آرڈرز پر دستخط کیے۔ ٹرمپ نے ٹویٹ کیا تھاکہ 'چین کے ساتھ ہونے والی ملاقات بہت مشکل ہوگی کیونکہ ہم اب زیادہ تجارتی خسارہ نہیں اٹھائیں گے۔بہر حال ٹرمپ نے یہ نہیں بتایا کہ وہ کس طرح تجارت پر تول مول کرتے ہوئے چین پر یہ دباؤ ڈالیں گے کہ وہ پیانگ یانگ کو متاثر کرے۔

ٹرمپ

مزید : صفحہ اول


loading...