نیشنل مینجمنٹ کالج کے 20رکنی وفد کی آئی جی سندھ سے ملاقات

نیشنل مینجمنٹ کالج کے 20رکنی وفد کی آئی جی سندھ سے ملاقات

کراچی (کرائم رپورٹر)سینٹرل پولیس آفس کراچی میں آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ سے نیشنل مینجمنٹ کالج کے20رکنی وفد نے این ایم سی ڈین نعیم اسلم کی سربراہی میں ملاقات کی۔آئی جی سندھ نے اس موقع پر پولیسنگ کے معیار میں فی زمانہ جدت اور تقاضوں سے ہم آہنگ کرنے کے اقدامات کا احاطہ کرتے ہوئے عوام اور پولیس کے یمابین دوستانہ ماحول۔عام آدمی کے مسائل کے حل،عوام کا پولیس پر اعتماد بحال کرنے،وغیرہ جیسے اقدامات ودیگر علاقائی مسائل مشکلات کے اذالوں کے حوالے سے ضلعی سطح پر فیسیلیٹیشن سینٹرز کے قیام, تھانوں کی سطح پر رپورٹنگ سینٹرز کے قیام, مددگار 15 کی اپ گریڈنگ, موجودہ سی سی ٹی وی کیمروں کی اپ گریڈنگ کے اقدامات کی تفصیلات سے وفد کو آگاہ کیا۔انہوں نے کہا کہ کراچی آپریشن کا کریڈٹ شاہدحیات کوجاتا ہے کہ جنہوں نے بڑی محنت اوربہادری کے ساتھ اس آپریشن کی قیادت کی،، انہوں نے وفد کوبتایا کہ کراچی کوجرائم کے علاوہ اور بھی کئی چیلنجزکا سامنا ہے،،، کراچی پاکستان کا معاشی حب ہے اورکراچی میں محب وطن عوام کے علاوہ ملک وسماج دشمن عناصر بھی رہتے ہیں تاہم ایسے عناصر کی بیخ کنی میں پولیس شب روز کام کررہی ہے اور انشااللہ سندھ پولیس کراچی آپریشن میں سرخرو ہوگی اور کامیابی سے اس آپریشن کوپایہ تکمیل تک پہنچائیگی۔ آئی جی سندھ نے اس موقع پر وفد کو اسپیشل برانچ, سی ٹی ڈی, انویسٹی گیشن و پراسی کیوشن, ٹرینگ برانچ, کے مجموعی امور میں بہتری لائے جانے سمیت ٹریفک پولیس سسٹم اور تھانوں کی سطح پر متعارف کردہ اصلاحات اور شہید پولیس اہلکاروں کے ورثا کے لیئے امدادی رقوم اضافہ کرنے جیسے اقدامات کے بارے میں بھی بتایا.انہوں نے کہا کہ پولیس ملازمین کی فلاح وبہبود کے لیئے ہر سطح پر اقدامات جاری ہیں جبکہ قیام امن کے حالات کو مستحکم رکھنے اور سندھ میں آباد مختلف کمیونیٹیز کی جان ومال کی سلامتی کو یقینی بنانیکے حوالے سے بھی پولیس رینج، ڈسٹرکٹس، اضلاع اور تھانوں کی سطح پر تمام تر ممکنہ اقدامات کا تفصیلی احاطہ کیا،،، انہوں نے کہا کہ پولیس کو اس بات کا بخوبی ادراک ہے کہ عوام کی ترقی وخوشحالی اور آزاد کاروباری سرگرمیوں کا انحصار صرف اور صرف پرامن معاشروں کے قیام سے ہی ممکن ہے۔اےآئی جی آپریشنز سندھ نے این ایم سی کے 106وین بیج کے مطالعاتی دورے کے شرکا کو دوران بریفنگ سندھ پولیس کے امن وامان کے حوالے سے اٹھائے گئے اقدامات سمیت پولیس کے مختلف شعبہ جات کے امور اور دستیاب وسائل میں رہتے ہں وئے انکی اپ گریڈیشن جیسے قابل عمل اقدامات سے آگاہ کیا. اس موقع پر ایڈیشنل آئی جی سندھ آفتاب پٹھان ،ایڈیشنل آئی جی سی ٹی ڈی ڈاکٹر ثنااللہ عباسی, ڈی آئی جی ہیڈکوارٹرز سندھ, ڈی آئی جی ٹی اینڈ ٹی, ڈی آئی جی فائنانس اور اے آئی جی ایڈمن سی پی او بھی موجود تھے۔اے آئی جی آپریشنز سندھ نے وفد کو بتایا کہ غیر معمولی سیکیورٹی حکمت عملی اور لائحہ عمل کی بدولت رواں سال 31 مارچ تک کے دورانئے میں ٹارگٹ کلنگز میں33فی صد, بھتہ پرچیوں کے واقعات میں21فی صد جبکہ اغوا برائے تاوان کی وارداتوں میں25فی صد تک کمی گذشتہ برس کے اسی دورانئے کے مقابلے میں واقع ہں وئی ہے۔انہوں نے رواں سال ماہ مارچ کے اختتام تک سندھ پولیس کی کارکردگی کا احاطہ کرتے ہوئے وفد کو بتایا کہ جرائم کے خلاف کاروائیوں میں پولیس نے مختلف تھانوں کی حدود سے1865ملزمان کو گرفتار کیا جبکہ پولیس کی دفاعی کاروائی کے نتیجے میں دہشت گردوں ،اغواکاروں اور اسٹریٹ کرمنلز/ڈاکوں سمیت81جرائم پیشہ ہلاک ہوئے.۔عوام کے جان ومال کے تحفظ کی خاطر رواں سال مارچ تک مجموعی طور پر 5پولیس افسران و جوانوں نے اپنی قیمتی جانوں کا نذرانہ دیا جن میں کراچی پولیس کے دو ،لاڑکانہ کے دو افسران و جوان جبکہ حیدرآباد کا ایک جوان شامل بھی شامل ہے۔نیشنل مینجمٹ کالج کے وفد نے سندھ پولیس کے مجموعی امور, اقدامات اور پولیسنگ کے معیار میں بہتری جیسی کاوشوں کے حوالے سے دی جانیوالی آگاہی کو نہایت مفید اور سیر حاصل قرار دیتے ہں وئے سندھ پولیس کے تعاون کا شکریہ ادا کیا۔اس موقع پر وفد نے آئی جی سندھ کو این ایم سی کی جانب سے جبکہ آئی جی سندھ نے وفد کو سندھ پولیس کی جانب سے یادگاری شیلڈ بھی دی۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر


loading...