مہمند ایجنسی ،مہمند سیاسی اتحاد اور فلاحی تنظیموں کا موبائل بندش کیخلاف مظاہرہ

مہمند ایجنسی ،مہمند سیاسی اتحاد اور فلاحی تنظیموں کا موبائل بندش کیخلاف ...

مہمند ایجنسی( نمائندہ پاکستان) مہمند ایجنسی غلنئی بازار میں مہمند سیاسی اتحاد اور فلاحی تنظیوں کے زیر اہتمام موبائل سروس بندش کے خلاف احتجاجی مظاہرہ۔ باجوڑ پشاور روڈ ایک گھنٹہ تک بند رکھا گیا۔بنیادی حقوق اور سہولیات ختم کرنے سے حمایت کی بجائے بد اعتمادی اور مایوسی کی فضاء پیدا ہورہی ہے۔بجلی کے بعد موبائل سہولت سے محروم رکھناقوم کے ساتھ نا انصافی ہے۔ عوامی تکلیف کو مد نظر رکھ کرفوری بحال کیا جائے۔ مظاہرے سے مقررین کا خطاب۔تفصیلات کے مطابق مہمند ایجنسی میں تین ہفتوں سے موبائل سروس کی مسلسل بندش سے درپیش مسائل کے رد عمل میں مہمند سیاسی اتحاد اور فلاحی تنظیوں کے زیر اہتمام پیر کے روز غلنئی بازار میں اختجاجی مظاہرہ کیا گیا۔ جس میں سیاسی پارٹی رہنماؤں کے علاوہ سیاسی ورکروں اور مقامی لوگوں نے شرکت کی۔ مظاہرین نے روڈ پر دھرنا بھی دیا جس کی وجہ سے ٹریفک معطل رہا۔ مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے مہمند سیاسی اتحاد کے صدر اور جماعت اسلامی کے امیرمحمد سعیدخان، جے یو آئی مہمند ایجنسی کے امیر مولانا محمد عارف حقانی، تحریک انصاف مہمند کے رہنماء قاری رحیم شاہ مہمند،پی ٹی آئی یوتھ ونگ کے جنرل سیکرٹری سجاد مہمند، مسلم لیگ ن اور انجمن دکانداران کے صدر حاجی بہرام خان،مہمند ویلفیئر آرگنائزیشن کے صدر میر افضل مہمند،مولانا عبدالحق، عوامی نیشنل پارٹی رہنماء حاجی رسول خان، جان سید خان، مسلم لیگ (ق) کے صدر ملک عظمت خان اور دیگر نے کہا کہ مہمند ایجنسی کے عوام پہلے ہی سے مختلف مسائل کھاد کی پابندی، اجتماعی ذمہ داری میں گرفتاریوں اور آئے روز چھاپوں ، بجلی کی ناروا لوڈشیڈنگ اور مامد گٹ کے کھنڈر روڈ سے پیداہونے والے مسائل کا شکار ہیں۔اب ساری ایجنسی میں موبائل سروس معطل کردی گئی۔ جو تین ہفتے گزرے کے بعد بھی بحال نہیں ہوسکی ہے۔ جس کی وجہ سے مزدور کار سے لیکر سرکاری ملازمین تک ، عام لوگوں کواور بیرون ملک افراد اور ان کے خاندانوں کو رابطوں میں شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ مہمند ایجنسی کے قبائل نے پولیٹیکل انتظامیہ اور سیکیورٹی فورسز کے شانہ بشانہ قربانیاں دی ہے اور امن و امان کی کے لئے بھر پور تعاون کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت پوری قوم کو اجتماعی شک کی نظر سے نہ دیکھے کیونکہ ایسے اقدامات سے عوام میں بد اعتمادی اور مایوسی پید اہورہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سیکیورٹی خدشات پر موبائل سروس کی عارضی بندش درست مگر غیر معینہ مدت تک پورے علاقے کو موبائل سروس سے محروم رکھنا مہمند ایجنسی کے عوام کے ساتھ زیادتی اور نا انصافی ہے۔ کیونکہ اس سے معمولات زندگی اور بازاروں میں کاروبار ٹھپ ہو کر رہ گیا ہے ۔اس لئے حکومت عوامی مشکلات کو مدنظر رکھ کرفوری طور پر موبائل سروس بحال کیا جائے۔ اور مزید اختجاجوں پرمجبور نہ کیا جائے ۔ مظاہرے کے دوران کسی ناخوشگوار واقعہ سے بچنے کے لئے مہمند لیویز اور خاصہ دار فورس اہلکاروں کی بڑی تعداد موجود رہی۔ بعد مین مظاہرین پر امن طور پر منتشر ہوگئے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...