پی ٹی اے کی جانب سے گستاخانہ مواد 4 ماہ میں ہٹانے بصورت دیگر ویب سائٹس بندکرنیکی یقین دہانی پر درخواست داخل دفتر کرنیکا حکم

پی ٹی اے کی جانب سے گستاخانہ مواد 4 ماہ میں ہٹانے بصورت دیگر ویب سائٹس ...

ملتا ن (خبر نگار خصو صی) لا ہور ہائیکورٹ ملتان بینچ نے سوشل میڈیاپر گستاخانہ مواد کے خلاف درخواست میں پی ٹی اے کی جانب(بقیہ نمبر34صفحہ12پر )

تمام گستاخانہ مواد4 ماہ میں ہٹانے اوردیگر صورت ایسی تمام ویب سائٹس بند کرنیکی یقین دہانی پر درخواست داخل دفترکرنے کا حکم دیاہے ۔فاضل عدالت میں ملتان کے محمد ایوب نے درخواست دائر کی تھی کہ فیس بک پر گستاخانہ مواد پر مشتمل صفحہ اپ لوڈ کیاگیا ہے لیکن اس بارے حکومت کی جانب سے کوئی کارروائی نہیں کی جارہی ہے اس لئے ذمہ داروں کے خلاف مقدمہ درج کرنے کے ساتھ سخت کارروائی عمل میں لائی جائے۔بعدازاں فاضل عدالت کے احکامات پرایف آئی اے ملتان کی جانب سے نامعلوم افرادکے خلاف مقدمہ درج کرکے کارروائی کی رپورٹ بھی پیش کی گئی نیزگزشتہ روزسماعت پر وکلاء نے دلائل دئیے کہ آنحضور ﷺ کی ذات اقدس کے خلاف جس ویب سائٹ کواستمعال کیا جائے وہ دوسرے حوالوں سے کتنی بھی مفید ہواس کا جاری رہناکسی طورپر درست نہیں ہے کیونکہ گستاخانہ مواد کی وجہ سے مسلمانوں کے نہ صرف مذہبی جذبات مجروح ہورہے ہیں بلکہ عوام میں شدید غم وغصہ پایاجاتاہے اوراگر ایسی ویب سائٹس کو فوری طورپر بند نہیں کیا گیا توملک میں افراتفری اورانتشاربڑھنے کا خدشہ بھی ہے اورجس طرح یوٹیوب کو آئندہ کوئی گستاخانہ مواد نہ دیکھے جانے کے معاہدہ کے بعد بحال کیا گیا ایسا معاہدہ فیس بک انتظامیہ سے بھی کیا جائے۔فاضل عدالت کے استفسارپر پی ٹی اے کی جانب سے بتایاگیا کہ عدالت کی جانب سے مہلت ملنے پر ایسی تمام ویب سائٹس سے گستاخانہ مواد مٹادیاجائیگا اگر ویب سائٹس نے ایسا موادبلاک نہیں کیا تو ان ویب سائٹس کو مکمل طورپر بند کردیاجائے گا۔اس طرح ایف آئی اے کی جانب سے جواب پیش کیا گیا گستاخانہ مواد اپ لوڈ کرنے والے 3 ملزموں کو گرفتارکرکے جسمانی ریمانڈ حاصل کرلیاگیا ہے نیز باقی شناخت ہونے والوں کے نام جوائنٹ انوسٹی گیشن ٹیم کی آئندہ میٹنگ میں دئیے جائیں گے۔

درخواست داخل دفتر

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...