سنگا پور کی عدالت نے جمعہ کے خطبہ میں عیسائیوں اور یہودیوں کے خلاف’’ اللہ سے مددمانگنے ‘‘پر بھارتی نژاد عالم دین کو ملک چھوڑنے کا حکم دے دیا

سنگا پور کی عدالت نے جمعہ کے خطبہ میں عیسائیوں اور یہودیوں کے خلاف’’ اللہ سے ...
سنگا پور کی عدالت نے جمعہ کے خطبہ میں عیسائیوں اور یہودیوں کے خلاف’’ اللہ سے مددمانگنے ‘‘پر بھارتی نژاد عالم دین کو ملک چھوڑنے کا حکم دے دیا

  


سنگاپور(ڈیلی پاکستان آن لائن) سنگاپور کی عدالت نے ایک ہندوستانی امام کو یہودیوں اور عیسائیوں کے خلاف منفی تبصرے کی وجہ سے ملک چھوڑنے کے احکامات جاری کر دیئے،4ہزار سنگا پوری ڈالرز جرمانہ بھی ادا کرنا پڑے گا۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق سنگا پور کی وزارت داخلہ نے چائینہ ٹاؤن کی جامع مسجد چلیا کے 46سالہ ہندوستانی نژاد چیف امام و خطیب مولانا محمدعبد الجمیل عبد المالک کے خلاف رواں سال کے پہلے مہینے کی چھے تاریخ کو جمعہ کے خطبے میں یہودیوں اور عیسائیوں کے خلاف اللہ سے مد د کی دعا کرنے پر کیس دائر کیا تھا،جس پر عدالت نے ’’جرم ‘‘ ثابت ہونے پر بھارتی نژاد عالم دین کے خلاف ملک بدری اور 4ہزار سنگا پوری ڈالرز جرمانہ ادا کرنے کے احکامات جاری کر دیئے ۔سنگا پور کی وزارت داخلہ کا کہنا ہے کہ عبد الجمیل عبد المالک نے 6جنوری کو نماز جمعہ کے خطبے میں متنازعہ تقریر کرتے ہوئے کہا تھا کہ ’’یہودیوں اور عیسائیوں کے خلاف اللہ مسلمانوں کی مدد کرے ‘‘ ۔

وزارت داخلہ نے کہا کہ ہم کسی بھی مذہب کے تئیں غفلت نہیں برت سکتے اور کسی مذہبی رہنما کی جانب سے کسی خاص مذہب یا اس سے وابستہ لوگوں کے تئیں منفی تبصرہ کئے جانے کی صورت میں سخت کارروائی کی جائے گی۔واضح رہے کہ بھارتی ریاست تامل ناڈو سے تعلق رکھنے والے نلا عبد الجمیل عبد المالک گذشتہ 7سال سے چائینہ ٹاؤن کی جامع مسجد میں چیف امام کی ذمہ داریاں نبھا رہے ہیں۔

مزید : بین الاقوامی


loading...