صحافی ڈینیئل پرل کے قاتلوں کو انصاف کے مطابق مناسب سزا ملنی چاہئے،ایلس ویلز

      صحافی ڈینیئل پرل کے قاتلوں کو انصاف کے مطابق مناسب سزا ملنی چاہئے،ایلس ...

  

واشنگٹن (اظہر زمان، بیوروچیف) امریکی حکام اور صحافیوں کے گروپوں نے سندھ ہائی کورٹ کے اس فیصلے کی شدید مذمت کی ہے جس میں برطانوی صحافی ڈینئیل پرل کو کراچی میں قتل کرنے والے مجرموں کی سزا میں تخفیف کی گئی ہے،عدالت نے مجرم احمد عمر شیخ کی سزائے موت کم کر کے سات سال قیدمیں تبدیل کردی۔ امریکی وزارت خارجہ کی اعلیٰ افسر ایلس ویلز نے ایک بیان میں اس امر پراطمینان کا اظہار کیا ہے کہ پاکستانی حکومت نے مجرموں کو دوبارہ گرفتار کر کے اس فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ میں اپیل دائر کرنے کا عندیہ دیا ہے۔ ویلز نے اپنے بیان میں مزید کہاہے کہ صحافی ڈینیئل پرل کو اغواء کے بعد قتل کرنے کے بہیمانہ جرم میں ملوث افراد کو انصاف کے اصولوں کے مطابق مناسب سزا ملنی چاہئے۔ یاد ر ہے کہ وال سٹریٹ جنرل کے ایک رپورٹر ڈینیئل پرل کو 2002 میں کراچی میں اس وقت اغواء کرکے قتل کر دیاگیا تھا جب وہ شدت پسند گروہوں کے القاعدہ سے تعلق کی تحقیقات میں مصروف تھے۔ امریکی حکام کا موقف یہ ہے کہ نائن الیون کے حملوں کے مبینہ ماسٹر مائنڈ خالد شیخ محمد نے ذاتی طور پر ڈینیئل پرل کو قتل کرانے کی کارروائی کی نگرانی کی امریکہ میں مختلف صحافتی اداروں نے سندھ ہائی کورٹ کے فیصلے کی مذمت کی ہے جن میں ”آر ایس ایف“ قابل ذکر ہے ”آر ایس ایف“نے اکی مذمتی بیان میں کہا ہے کہ انہیں اسے فیصلے سے شدید جھٹکا لگا ہے کیونکہ ایک صحافی کے بہیمانہ قتل میں ملوث مجرموں کو بری کرنا نا قابل برداشت ہے۔

ایلس ویلز

مزید :

صفحہ اول -