وزیراعظم نے ریلیف پیکج دیکر رئیل اسٹیٹ سیکٹر کے دل جیت لئے: ڈیلرز

  وزیراعظم نے ریلیف پیکج دیکر رئیل اسٹیٹ سیکٹر کے دل جیت لئے: ڈیلرز

  

لاہور (رپورٹ: میاں اشفاق انجم، تصاویر، ایوب شبیر)تعمیراتی شعبہ کے لئے وزیراعظم کا ریلیف پیکیج رئیل اسٹیٹ سیکٹر کیلئے بریک تھرو ثابت ہوگا۔ کنسٹرکشن کے شعبہ کو صنعت کا درجہ دینے کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہیں،30ارب کی سٹینڈنگ کے مثبت اثرات مرتب ہوں گے۔ اس سال تعمیراتی شعبہ میں سرمایہ کاری کا سورس نہ پوچھنا احسن اقدام ہے جس کے پاس گھر نہیں ہے اس کو پلاٹ خریدنے سے گھر بنانے تک سرمایہ کاری کے سورس آف انکم سے استثنیٰ دیا جائے۔ ان خیالات کا اظہار ڈی ایچ اے اسٹیٹ ایجنٹ ایسوسی ایشن کے صدر ابوبکر بھٹی، سابق صدر میاں طلعت احمد، میجر رفیق حسرت، سینئر نائب صدر میجر انور ڈار، سیکرٹری میاں شاہد محمود، ذوالفقار حسن، میجر غلام محی الدین، میاں نواز، شیخ احتشام، ڈاکٹر خالد چوہدری، حاجی زاہد حسین، احسن ملک نے ویزراعظم عمران خان کی طرف سے تعمیراتی پیکیج کے حوالے سے ردعمل دیتے ہوئے روزنامہ پاکستان سے خصوصی گفتگو میں کیا۔ انہوں نے کہا کہ تعمیراتی شعبہ رئیل اسٹیٹ سیکٹر کا حصہ ہے، رئیل اسٹیٹ کو صنعت کا درج دے کر بہتر ثمرات سمیٹے جاسکتے ہیں۔ گھر بنانے کیلئے گین ٹیکس کی چھوٹ کافی نہیں،پلاٹ کی خرید و فروخت پر گین ٹیکس کی معیاد 8سال سے کم کرکے 3سال کی جائے۔ وزیراعظم عمران خان نے رئیل اسٹیٹ سیکٹر کے دل جیت لئے ہیں، تعمیراتی شعبہ میں سرمایہ کاری سے 40 مزید شعبے چلیں گے۔ صوبوں کی طرف سے اسٹام ڈیوٹی اور سی وی ٹی دوفیصد کرنے سے رئیل اسٹیٹ پٹڑی پر چڑھ جائے گی۔انہوں نے کہا کہ تعمیراتی میٹریل پر سیلز ٹیکس کی چھوٹ خوش آئند ہے۔ سیمنٹ اور سریا پر بھی ٹیکسز کم کئے جائیں۔ تعمیراتی پیکیج کی تفصیلات کا جلد نوٹیفکیشن جاری کیا جائے۔ فیکس ٹیکس کی تجویز احسن اقدام ہے۔ گزشتہ حکومت کی طرف سے یکم جولائی 2016ء کو مسلط کئے گئے ٹیکسز بھی واپس لئے جائیں۔ وزیراعظم کے تعمیراتی پیکج پر عملدرآمد سے 50لاکھ گھروں کا خواب شرمندہ تعبیر ہونے کی راہ ہموار ہوگئی ہے۔

ڈیلرز

مزید :

صفحہ اول -