کرونا وائرس کا آنکھ سے تعلق‘ نشتر ہسپتال میں آگاہی سیشن

  کرونا وائرس کا آنکھ سے تعلق‘ نشتر ہسپتال میں آگاہی سیشن

  

ملتان(نمائندہ خصوصی)نشتر میڈیکل یونیورسٹی و ہسپتال کے محقق و سربراہ شعبہ امراض چشم پروفیسر ڈاکٹر راشد قمر راو نے کہا ہے کہ کورونا وائرس یا COVID-19 اس کی موجودہ رفتار پرایک وبائی مرض بن گیا ہے جس میں ایک سو سے اٹھارہ سے زائد ممالک متاثر ہوئے ہیں اور دنیا بھر میں اب تک ہزاروں ہلاکتیں ہو چکی ہیں,خطرناک حد تک بیماری کے پھیلاؤ سے پورے پاکستان میں شہریوں میں خوف و ہراس پایا جا رہا ہے، اس وائرس کی منتقلی کے راستے کا پوری طرح سے(بقیہ نمبر33صفحہ6پر)

مطالعہ کیا گیا ہے گھبرانے کے بجائے گھروں میں ہی رہیں اور معاشرتی دوری کی مشق کریں,خوف و ہراس اس بیماری کو محدود کرنے اور موجود بحران سے نمٹنے میں مدد نہیں دے رہا ہے،جتنا یہ وائرس جسم کے اندرونی اہم اعضاء پر حملہ کرتا ہے، اس وائرس کے آپ کی آنکھوں تک پہنچنے اور نازک تحفظ میں گھومنا بہت ممکن ہے،ایک عام آکولر علامت جس کی وجہ سے ایک مریض کورونا وائرس میں مبتلا ہوسکتا ہے اس کی آنکھ کی بیرونی دیوار کے ڈھانچے کی سوزش کی وجہ سے "گیلی اور رونے والی" آنکھ ہوتی ہے،جسے آشوب چشم کے نام سے جانا جاتا ہے،وائرل کانجکیوٹائٹس اوپری سانس کی نالی کے انفیکشن کے ساتھ ہوسکتا ہے اور ایسے معاملات پیش آئے ہیں جہاں لوگ کوویڈ 19 کے لئے مثبت، وائرل کانجکیوٹائٹس یا "گلابی آنکھ" میں سے ایک علامت کے ساتھ پائے گئے ہیں،ان خیالات کا اظہار انہوں نے کورونا وائرس اور آنکھ سے اس کے تعلق سے متعلق آگاہی سیشن میں خطاب کرتے ہوئے کیا ان کا مزید کہنا تھا کہ چشم کے ماہر اس سلسلے میں بھی ایک اہم کردار ادا کرسکتے ہیں، خاص طور پر اس معاملے میں جہاں وہ مریض کی تشخیص کرنے والے پہلے ماہر بن جاتے ہیں جو سفر کی مثبت تاریخ کے ساتھ اوپری سانس کے انفیکشن سے متعلق علامات کے ساتھ آتا ہے،اس کی ذمہ داری ڈاکٹر پر عائد ہوتی ہے کہ وہ مشتبہ مریض کا بھرپور طریقے سے معائنہ کرے اس سے پہلے کہ اس کا مریض اس بیماری کے مزید پھیلاؤ کا ذریعہ بن جائے، اس بیماری کی منتقلی کا ایک راستہ ہاتھ سے بھی سمجھا گیا ہے،صحت کی دیکھ بھال کرنے والے کارکنوں کے لئے جو اس افراتفری کی صورتحال سے بالکل ہی سامنے کھڑے ہو کر نمٹ رہے ہیں، جو جانتے ہیں کہ انہیں مسلسل کورونا وائرس کے مریض کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے، انہیں اپنے ذاتی حفاظتی سامان میں حفاظتی چشمیں لازمی پہننا چاہیں، آنکھوں کو اس وائرل انفیکشن سے بچانے اور آنکھوں کو چھونے سے ہمیشہ گریز کرنے کا ایک اور اقدام کانٹیکٹ لینس کے بجائے شیشے کا استعمال کرنا ہے، یہ نہ صرف آنکھوں کے سامنے رکاوٹ فراہم کرے گا بلکہ لینس لگانے اور اتارنے کے عمل میں ہاتھوں سے بار بار اپنی آنکھوں کے بالوں کو چھونے سے بھی روک دے گا، پوری دنیا میں صحت کی ایمرجنسی کے اس دور میں، عام لوگوں کے لئے یہ سمجھنا ضروری ہے کہ انہیں باقاعدگی سے چیک اپ کے لئے یا ایسے معاملات کے لئے، جن کو فوری طور پر توجہ دینے کی ضرورت نہیں ہے،اسپتالوں یا کلینک میں نہ آئیں،پاکستان میں ہلاکتوں کی تعداد بڑھ رہی ہے یہ صرف اس لئے ہوا ہے کیونکہ عام آبادی ابھی بھی عوامی جلسوں اور دفاتر سے رخصت ہونے پر 14 دن گھر پر رہنے کے خیال کو ایڈجسٹ کرنے میں وقت نکال رہی ہے عوام کے لئے یہ سمجھنا ضروری ہے کہ ہاتھ دھونے اور گھر میں رہنے کے انسدادی تدابیر پر عمل نہ کرنے سے معاشرے میں ہر فرد خصوصا کمزور افراد کو اس وائرس کا خطرہ لاحق ہوجاتا ہے،اس سے ہمارے جیسے تیسری دنیا کے ملک کی صحت کی دیکھ بھال پر اور بھی زیادہ دباؤ پڑتا ہے، جو ایک وقت میں بہت سارے لوگوں کی ہنگامی صورتحال کو ایڈجسٹ کرنے کے لئے تیار نہیں ہوتا ہے جس میں ایک وقت میں سب کو وینٹیلیٹری امداد اور انتہائی نگہداشت کی ضرورت ہوتی ہے.

سیشن

مزید :

ملتان صفحہ آخر -