کرونا وائرس کا شبہ‘ نالہ ولی محمد کی بزرگ خاتون نشتر میں جاں بحق

  کرونا وائرس کا شبہ‘ نالہ ولی محمد کی بزرگ خاتون نشتر میں جاں بحق

  

ملتان (سپیشل رپورٹر‘ نمائندہ خصوصی) کرونا وائرس کے شبہ میں نالہ ولی محمد کی 75سالہ بزرگ خاتون خزانہ بی بی گزشتہ روز نشتر ہسپتال میں چل بسی،میٹرو پولیٹن کارپوریشن کے تدفین سکواڈ نے ریسکیوٹیموں کے ہمراہ میت حکومتی ایس او پیز کے مطابق نماز جنازہ کے بعد دفنادی۔اس ضمن میں گزشتہ روز نالہ ولی محمد کی رہائشی 75سالہ بزرگ خاتون کو کروناوائرس (بقیہ نمبر36صفحہ6پر)

کے شبہ میں نشتر ہسپتال کے آئسولیشن وارڈ میں داخل کرایا گیا تھا جو جانبر ناہوسکی اور چل بسی جس کے بعد نشتر انتظامیہ کی جانب سے میت کو میٹروپولیٹن کارپوریشن کے تدفین سکواڈ کے حوالے کیا گیا جنھوں نے ریسکیو1122کی مدد سے مذکورہ خاتون کی میت کو ایس او پیز کے مطابق حسن پروانہ قبرستا ن میں نماز جنازہ کے بعد دفنا دیا ہے اس موقع پر سیکورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کئے گئے تھے۔تاہم دوسری جانب بزرگ خاتون کی کرونا وائرس سے ہلاکت کے باعث نالہ ولی محمد کے علاقہ میں خوف کی لہر دوڑ گئی ہے۔ ملتان میں کرونا وائرس سے ممکنہ ہلاکتوں کے پیش نظر ریسکیو انتظامیہ نے میٹرو پولیٹن کارپوریشن سے تدفین کیلئے 15تابوت طلب کرلیئے ہیں۔میٹرو پولیٹن کارپوریشن کے تدفین سکواڈ کے انچارج منیر احمد کے مطابق مذکورہ تابوت جلد ریسکیو 1122کے حوالے کردیئے جائیں گے جن میں سے 10تابوت ریسکیو سینٹر کلمہ چوک جبکہ 5تابوت ریسکیو سینٹر چوک قذافی میں رکھوائے جائیں گے۔انھوں نے مزید بتایا کہ تدفین کے عمل میں شریک عملہ کیلئے 200حفاظتی لباس بھی منگوائے جارہے ہیں۔ ملتان کے علاقے لکڑ منڈی کی رہائشی خاتون مریضہ حجانی مائی جو جمعرات کے روز کورونا کے شبہ میں آئی سو لیشن وارڈ میں دم توڑ گئی تھیں انکی کورونا کے حوالے سے رپورٹ نیگیٹیو آئی ہے تاہم جمعہ کے روز رپورٹ آنے سے قبل ہی احتیاطی طور پر حجانی مائی کا جنازہ اور تدفین کورونا میں مبتلا مریض کی طرح کی گئی جبکہ ادھر دوسری جانب کورونا میں مبتلا ہو کر دم توڑنے والے ملتان کے علاقے تغلق ٹاون کے اکسٹھ سالہ عطااللہ کے چھ رشتہ داروں کو کورونا کے شبہ میں نشتر ہسپتال کے آئی سو لیشن وارڈ منتقل کر دیا گیا ہے جبکہ نشتر ہسپتال ایمرجنسی کے میل نرس علی اور مظفر گڑھ کی رہائشی خاتون مریضہ کو بھی کورونا کے شبہ میں آئی سو لیشن وارڈ منتقل کر کے تمام مشتبہ مریضوں کے نمونے لیبارٹری بھجوا دئیے گئے ہیں۔ ملتان کے علاقے تغلق ٹاون کا اکسٹھ سالہ عطااللہ تین روز قبل دیگر بیماریوں کے ساتھ ساتھ کورونا میں مبتلا ہو کر نشتر ہسپتال کے آئی سو لیشن وارڈ میں دم توڑ گیا تھا،کورونا میں مبتلا ہو کر دم توڑنے والے عطااللہ کے دیگر اہل خانہ کی سکریننگ کے لئے محکمہ صحت کی ٹیمیں گزشتہ روز تغلق ٹاون پہنچی جہاں اسکے اہل خانہ کی سکریننگ کی گئی،محکمہ صحت ذرائع کے مطابق بظاہر عطااللہ کے تمام اہل خانہ باالکل صحت مند ہیں تاہم عطااللہ کے?ٹھ رشتہ داروں کو مزید سکریننگ کے لئے احتیاطی طور پر نشتر ہسپتال کورونا کاونٹر ریفر کیا جا رہا ہے،61 سالہ عطااللہ میں دو روز قبل بعد از وفات اور تدفین کورونا کی تصدیق ہوئی تھی،جبکہ ذرائع نے بتایا عطااللہ وفات سے قبل علاقے میں گھومتا پھرتا رہا میل جول جاری رکھا۔ چیف ایگزیکٹیو ہیلتھ ملتان کے احکامات پر کورونا وائرس سے جاں بحق ہونے والوں کی تدفین کے لیئے انتظامات کرنے، پروٹوکول پر عمل کرانے کے لئے 9 ممبران پر مشتمل کمیٹی تشکیل دی گئی ہے، جس میں ڈسٹرکٹ ہیلتھ ا?فیسر، متعلقہ تحصیل کا ڈپٹی ڈسٹرکٹ ہیلتھ ا?فیسر، یونین کونسل کے میڈیکل اور وومن میڈیکل ا?فیسر، ڈسٹرکٹ سرویلینس کو ا?رڈینیٹر، ڈسٹرکٹ سینیٹری انسپکٹر ملتان، متعلقہ یونین کونسل کی لیڈی ہیلتھ سپر وائزر، لیڈی ہیلتھ ورکر اور متعلقہ یونین کونسل جہاں کا شخص جاں بحق ہوا ہو گا اس کے سیکرٹری یونین کونسل پر مشتمل ہو گی، ورلڈ ہیلتھ ا?رگنائزیشن کی گائیڈ لائن پر عمل کرتے ہوئے تدفین کی جائے گی، کمیٹی پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر ڈیپارٹمنٹ کے احکامات پر بنائی گئی ہے، کمیٹیوں کے فوکل پرسن بھی تعنات ہوں۔گے جو کہ تمام معاملات کو دیکھیں گے۔

نشتر /جاں بحق

مزید :

ملتان صفحہ آخر -