صدر زرداری سے آرمی چیف کی ملاقات، فوج کیخلاف بے بنیاد الزامات پر تشویش کا اظہار

صدر زرداری سے آرمی چیف کی ملاقات، فوج کیخلاف بے بنیاد الزامات پر تشویش کا ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

                                                                        اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) صدر مملکت آصف علی زرداری سے چیف آف آرمی اسٹاف جنرل سید عاصم منیر نے ملاقات کی۔چیف آف آرمی سٹاف نے صدر مملکت کو پاکستان کے صدر اور مسلح افواج کے کمانڈر کا عہدہ سنبھالنے پر مبارکباد دی اور صدر مملکت کی کامیاب مدت کیلئے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔چیف آف آرمی اسٹاف نے صدر مملکت کو دہشت گردی کے خلاف جاری فوجی آپریشنز سے آگاہ کیا اور روایتی خطرات کے خلاف آپریشنل تیاریوں پر بھی روشنی ڈالی۔ چیف آف آرمی اسٹاف نے بلوچستان اور خیبرپختونخوا کے علاقوں سمیت ترقیاتی منصوبوں میں فوج کے کردار کے بارے میں بھی آگاہ کیا۔صدر مملکت نے پاکستان کی مسلح افواج کے مثالی کردار کو سراہتے ہوئے کہا کہ ریاست کی خودمختاری اور علاقائی سالمیت کے تحفظ میں فوج کی خدمات کلیدی حیثیت کی حامل رہی ہیں۔صدر مملکت کا قومی طاقت کے تمام عناصر کے ذریعے دہشت گردی کا بھرپور جواب دینے کے قومی عزم کا اظہار کیا۔آصف زرداری نے ایک مخصوص سیاسی جماعت اور اس کے چند افراد کی جانب سے ادارے اور اسکی قیادت کے خلاف محدود سیاسی مفادات کے حصول کیلئے لگائے گئے بے بنیاد اور بلاجواز الزامات پر شدید تشویش کا اظہار کیا اور رخنہ ڈالنے والے عناصر سے آہنی ہاتھوں سے نمٹنے کا عزم کیا۔علاوہ ازیں صدر آصف علی زرداری نے سنگاپور میں پاکستان کے ہائی کمشنر پر زور دیا ہے کہ وہ پاکستان کی سرمایہ کاری دوست پالیسیوں سے مستفید ہونے کی ترغیب دینے کے علاوہ سنگاپور کے کاروباری اداروں کے ساتھ دوطرفہ تجارت اور کاروباری روابط کے فروغ کے لیے کام کریں۔ پاکستان کی نو تعینات ہائی کمشنر رابعہ شفیق سے گفتگو کرتے ہوئے صدر نے سنگاپور کو پاکستانی خوراک اور زرعی مصنوعات کی برآمد کے مواقع تلاش کرنے کی ضرورت پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان پراسیسڈ فوڈ آئٹمز پولٹری، گوشت، سی فوڈ برآمد کرکے سنگاپور کے لیے غذائی سپلائی کا ایک مستحکم ذریعہ بن سکتا ہے۔ انہوں نے پاکستانی افرادی قوت کو سنگاپور میں برآمد کرنے کے راستے تلاش کرنے اور دو طرفہ تعلقات کو بڑھانے کے لیے کام کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ انفارمیشن ٹیکنالوجی اور زراعت کے شعبوں میں تعاون کو بھی فروغ دینا چاہیے۔

صدرمملکت

مزید :

صفحہ اول -