ڈبلیو ایم سی افسروں کی کاریگری، چند سڑکوں کی لش پ، باقی شہر فلتھ ڈپو میں تبدیل 

ڈبلیو ایم سی افسروں کی کاریگری، چند سڑکوں کی لش پ، باقی شہر فلتھ ڈپو میں ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

                                                                                                             ملتان (نیوز رپورٹر) کمشنر اور ڈی سی ملتان کے مشاہداتی دوروں کے باوجود ویسٹ منیجمنٹ کمپنی کی بالائی بیوروکریسی سے لیکر اپریشن منیجرز تک جملہ افسران و ملازمین نے پچھلے چند سالوں سے صفائی کے لیئے ملتان شہر کی چند مخصوص مرکزی شاہراوں اور تجارتی مراکز تک خود کو محدود کرلیا ہے جبکہ سکنی علاقہ جات کے مکینوں کو گندگی اور غلاظت کے ڈھیروں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے ویسٹ منیجمنٹ کمپنی کی اس روش سے تنگ آئے شہریوں نے اپنی مدد آپ کے تحت کچرا اٹھانے والے پرائیویٹ سویپرز رکھنے پر مجبور ہیں جبکہ کمپنی کے بیسیوں سویپرز مقتدر و غیر مقتدر مقامی اشرافیہ اور ا(بقیہ نمبر48صفحہ7پر)

فسران کے گھروں کی صفائی و سودا سلف لانے پر مامور کیئے ہوئے ہیں ستم ظریفی یہ ہے کہ ضلعی افسران کے مشاہداتی دورے بھی فقط مخصوص مرکزی شاہراوں تک محدود رہتے ہیں جبکہ سکنی علاقہ جات بھی ان کے دائرہ کار میں ہی ہیں لیکن ضلعی افسران مڈل کلاسیئے اور لوئر کلاسیئے کی کالونیوں اور محلہ جات کا وزٹ کرنے سے بوجوہ کتراتے ہیں شہریوں کے مطابق ان سے وفاقی و صوبائی ٹیکسز کی وصولی تو کی جاتی ہے لیکن مقامی انتظامیہ انہیں سروسز فراہم کرنے سے گریزاں ہے جو کہ ایک غیر ذمہ دارنہ عمل ہونے سمیت انتظامیہ کی کارکردگی پر بہت بڑا سوالیہ نشان ہے شہریوں نے مزید بتایا کہ مقامی افسران کی ذہنی اپروچ کا اندازہ اس بات سے بھی لگایا جاسکتا ہے کہ وفاقی و صوبائی سطح کے عہدیدار کی شہر میں آمد پر اس کے شیدول کے مطابق شاہراوں کے نصیب جاگ جاتے ہیں لیکن سکنی علاقہ جات کے مکین تب بھی انتظامیہ کی عدم توجہی کا شکار رہتے ہیں شہریوں نے کمشنر و ڈی سی ملتان سمیت چیف ایگزیکٹو آفیسر شاہد یعقوب، جیئرمین ویسٹ منیجمنٹ کمپنی میاں راشد اقبال سے مطالبہ کیا ہے کہ مقتدر و غیر مقتدر اشرافیہ کے گھروں سے بیسیوں سویپرز ملازمین کو واپس لاکر ٹیکس پیئر مکینوں کو صفائی کی سہولت فراہم کرنے کے لیئے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کیئے جائیں۔