حافظ آباد، ڈکیتی کی بڑھتی وارداتوں پر تاجروں، دوکانداروں کا احتجاج

حافظ آباد، ڈکیتی کی بڑھتی وارداتوں پر تاجروں، دوکانداروں کا احتجاج

حافظ آباد(ڈسٹرکٹ رپورٹر) تاجروں اور دوکانداروں کی کثیر تعداد نے حافظ آباد شہر میں ڈکیتی کی بڑھتی وارداتوں اور مقامی تاجر شیخ منیر کوڈکیتی کے دوران فائرنگ کرکے شدید ذخمی کرکے اس سے لاکھوں روپے کے پرائز بانڈز اور نقدی لوٹ لئے جانے کے خلاف یہاں فوارہ چوک میں احتجاجی مظاہرہ کرتے ہوئے ٹریفک بلاک کردی۔احتجاجی مظاھرہ کی قیادت مرکزی انجمن تاجران کے صدرشیخ محمد امجد و دیگر راہنما سیٹھ ہمایوں، حاجی محمد رفیق مغل اور ملک ہمایوں شہزاد نے کی جبکہ کاروباروی اور تجارتی تنظیموں کے عہدیداران اور ممبران کی کثیر تعداد نے شرکت کی ۔ اس موقع پر مظاہرین جنھوں نے شہر میں بڑھتی ڈکیتی کی وارداتوں کے خلاف کتبے اٹھار کھے تھے انھوں نے ایس۔ایچ۔او سٹی علی اکبر چٹھہ اور پولیس کے خلاف نعرہ بازی کرتے ہوئے کہا کہ شہریوں کو دن دیہاڑے لوٹا جارہا ہے جبکہ پولیس خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے۔ مظاہرین نے مزید کہا کہ شیخ منیر کے بھتیجے شیخ عرفان کو بھی چند ماہ قبل مسلح ڈاکو فائرنگ کرکے شدید ذخمی کرنے کے بعد اس سے چالیس لاکھ سے زائد کے پرائز بانڈز اور نقدی لوٹ لے گئے تھے اور عرفان شبیرکے ذخمی ہونے کے بعد ایک ٹانگ بھی کٹ گئی تھی لیکن سٹی پولیس آج تک اسکے ملزمان کا سراغ نہ لگا سکی ہے اور اب گذشتہ روز مسلح ڈاکوؤں نے شیخ عرفان کے چچا شیخ منیر کوبھی فائرنگ کرنے کے بعد اسے موت و حیات کی کشمکش میں مبتلا کردیا ہے ۔علاوہ ازیں پولیس پانچ روز قبل مقامی تاجر محمد ریاض کے گھر50لاکھ روپے سے زائد ڈاکہ کے ملزمان کا بھی سراغ نہ لگا سکی ہے جس کیوجہ سے تاجر اور شہری اپنے آپ کو غیر محفوظ تصور کرنے لگے ہیں۔ تاجروں اور دوکانداروں نے متنبہ کیا کہ اگر ڈکیتی کی مذکورہ وارداتوں کا سات روز تک سراغ لگا کر ملزمان کو گرفتار نہ کیا گیا تو شہر بھر میں شٹر ڈاؤں ھڑتال کرینگے۔

مزید : علاقائی