خصوصی عدالت پر عدم اعتماد کرنیوالے ملزم کی منتقلی کیس کیلئے درخواست دائر

خصوصی عدالت پر عدم اعتماد کرنیوالے ملزم کی منتقلی کیس کیلئے درخواست دائر

لاہور (نامہ نگار خصوصی ) ڈسکہ میں قتل ہونے والے وکلا کے قتل کے ملزم اور معطل ایچ ایس او نے اپنے خلاف انسداد دہشت گردی کی عدالت پر عدم اعتماد کردیا اور اپنے مقدمہ انسداد دہشت گردی کی کسی دوسری عدالت منتقل کرنے کے لئے لاہور ہائیکورٹ سے رجوع کرلیا۔ گزشتہ روزچیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ مسٹر جسٹس منظوراحمد ملک نے تھانہ ڈسکہ کے معطل ایس ایچ او شہزاد وڑائچ کی درخواست پر سماعت کی۔ شہزادوڑائچ کے وکیل شہزادہ مظہر نے موقف اختیار کیا کہ انسداددہشت گردی کی خصوصی عدالت گوجرانوالہ کی خاتون جج مقدمہ میں جانبداری کا مظاہرہ کررہی ہیں اور درخواست گزار کو عدالت سے انصاف کی توقع نہیں ہے اس لیے درخواست گزار شہزاد وڑائچ کے خلاف مقدمہ کسی دوسری انسداد دہشت گردی کی عدالت میں منتقل کردیاجائے۔ سماعت کے دوران چیف جسٹس نے کہا کہ انسدادددہشت گردی کی عدالت کی جج بشری زمان محنتی اور قابل جج ہیں اور وہ جانبداری نہیں دکھا سکتیں، چیف جسٹس نے ملزم شہزادوڑائچ کے وکیل شہزادہ مظہر کو ہدایت کی کہ وہ اپنے ملزم کا دفاع صرف دلائل سے کریں۔ چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ نے مقدمہ کسی دوسری عدالت منتقل کرنے درخواست پر 5 اگست کے لیے نوٹس جاری کردیئے ہیں۔

عدم اعتماد

مزید : صفحہ آخر