کرک ،گیس کے غیر قانونی کنکشز کیخلاف آپریشن جاری

کرک ،گیس کے غیر قانونی کنکشز کیخلاف آپریشن جاری

کرک( بیورورپورٹ )کر ک شہر میں گیس کے غیر قانونی کنکشنوں کے خلاف آپریشن تیسرے روز بھی جاری ،لائنوں کی بحالی اور صفائی سمیت گیس پریشر میں اضافہ یقینی بنانے کیلئے د ومزید ٹینکیکل ٹیمیں کرک پہنچ گئیں ، مرکز کورونہ اور دیگر علاقوں میں مزید درجنوں غیر قانونی کنکشنز منقطلع کر دئے گئے ۔تفصیلات کے مطابق کرک شہر و مضافاتی دیہات میں گیس پریشر کی کمی کا مسئلہ حل کیلئے سوئی نادرن حکام کی ہدایت پر آپریشن تیسر ے روز بھی جاری ہے اور سوئی نادرن خیبر پختونخوا کے جی ایم ، اور چیف انجینئر کی ہدایت پر ڈویژنل انجینئر عبد الغفور نے مزید دو ٹیکنیکل ٹیمیں کرک پہنچا کر اقدامات کا آغاز کر دیا ہے ٹیکینکل ٹیم سوئی نادرن کے تجربہ کار انجینئر اور سابق انچار ج کرک اجمل بیٹنی و موجودہ انچارج ناصر بنگش کی سربراہی میں تیز رفتاری سے لائنوں سے ’’ بڑے سوراخوں ‘‘ کے خاتمے اور لائنوں کی بحالی کے کاموں میں مصروف ہو چکے ہیں تیسرے روز سوئی نادرن کے عملے نے ایک بار پھر ریورس لگا کر پہلے اور دوسرے دن ر ہ جانیوالے غیر قانونی کنکشنوں کا خاتمہ کیا اور تبلیغی مرکز و دیگر علاقوں میں مزید درجنوں کنکشنوں کے منہ بند کر کے گیس پائپ میں شہری علاقوں تک گیس کی ترسیل آزاد کر ائی میڈیا سے آپریشن کے حوالے سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے اجمل بیٹنی نے کہا کہ لاقانونیت اور گیس کے غیر قانونی استعمال کی صورت میں صارفین اپنے پیسوں کا ضائع مزید ترک کرکے اپنے آ پ کو قانونی دائرے میں لائینگے تو سارے مسائل حل ہو جائینگے انہوں نے مزید کہا کہ سوئی نادرن کرک کا انچارج رہا اس وقت بھی عوام سے اپیل کرتا تھا اور آج بھی دوبارہ اپیل کرتا ہوں کہ خدارا بازاروں میں بکنے والے غیر معیاری پائپس گیس سپلائی کیلئے استعمال نہ کریں یہ بہت بڑی تباہی ہے اور کرک میں صرف اور صرف ان غیر معیاری پائپوں، جن پر غیر قانونی صارفین نے کروڑوں روپے خرچ کیئے ہیں ، کی وجہ سے آ ج گیس پریشر انتہائی کم ہے اور جگہ جگہ بے دردی سے پائپ پنکچر ہونے کی وجہ سے اس میں اضافہ بھی نہیں کیا جا سکتا ۔ شہر میں جاری آپریشن اور گیس پریشر کے مسائل کے سے سوئی نادرن کے ڈویژنل انچارج انجینئر عبد الغفور نے میڈیا کو بتایا ہے کہ گیس کے مین لائن سے غیر قانونی کنکشنز ہٹانے کے بعد اکثر علاقوں کے قانونی صارفین کا گیس پریشر بڑھ جا ئیگا انہوں نے مزید کہا کہ شہر سمیت ضلع کے دیگر علاقوں میں نئے میٹرز کی تنصیب کیلئے بھی حکمت عملی وضع کر دی گئی ہے سینکڑوں ڈیمانڈ نوٹس کی قانونی صارفین کے ذریعے ادائیگی کا عمل بھی شروع کیا جارہا ہے انہوں نے اس حوالے سے میڈیا اور بالخصوص علاقائی مشران سے معاونت کی اپیل کرتے ہوئے بتایا ہے کہ غیر قانونی گیس کنکشن کسی بھی صورت مسئلے کا حل نہیں اور نہ ہی موجودہ صورت حال میں گیس پریشر میں اضافہ کیا جا سکتا ہے غیر معیاری پائپس اور غیر روایتی طریقوں سے حاصل کیئے گئے کنکش خطرناک ہونے کے ساتھ ساتھ ممنوع ہیں اور کہا کہ شہر ی علاقوں کو ماڈل تصور کرکے یہاں گیس کے حوالے سے ابتر صورت حال پر قابو پا کر صارفین کو سہولت فراہم کیا جا ئیگا جس کے بعد کسی رعایت نہیں کی جا ئیگی اور غیر قانونی طریقوں سے گیس استعمال کرنے والوں کے خلاف سخت ترین قانونی کارروائی کی جا ئیگی ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر