پاکستان میں کانگو وائرس کا حملہ، ڈاکٹر اور نرس کی جان لینے والے اس خطرناک ترین وائرس سے آپ کیسے محفوظ رہ سکتے ہیں؟ ڈاکٹروں کی انتہائی مفید ہدایات جانئے

پاکستان میں کانگو وائرس کا حملہ، ڈاکٹر اور نرس کی جان لینے والے اس خطرناک ...
پاکستان میں کانگو وائرس کا حملہ، ڈاکٹر اور نرس کی جان لینے والے اس خطرناک ترین وائرس سے آپ کیسے محفوظ رہ سکتے ہیں؟ ڈاکٹروں کی انتہائی مفید ہدایات جانئے

  

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) کانگو وائر س سے متاثرہ مریضہ کا علاج کرنے والے ڈاکٹر کی موت اور طبی عملے کے درجن بھر دیگر ارکان کے متاثر ہونے کے واقعہ نے ملک کے طول و عرض میں خوف کی لہر دوڑادی ہے۔ یہ وائرس اس حوالے سے خصوصی طور پر خوف کا سبب ہے کہ صرف متاثرہ مریض ہی نہیں بلکہ اس کا معالج اور اردگرد موجود افراد بھی اس کی وجہ سے موت کے منہ میں جا سکتے ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اس وائرس سے محفوظ رہنے کے لئے کچھ احتیاطی تدابیر پر سختی سے کاربند رہنا ضروری ہے۔ ان احتیاطی تدابیر میں صفائی کا اہتمام، حفاظتی سازوسامان کا استعمال، انجیکشن کی احتیاطی تدابیر اور اس وائرس کے باعث دنیا سے رخصت ہونے والوں کی تدفین کے وقت احتیاطی تدابیر اہم ترین ہیں۔

پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز کے پبلک ہیلتھ سپیشلسٹ ڈاکٹر وسیم خواجہ کا کہنا تھا کہ اس وائرس کی پسوﺅں سے انسانوں میں منتقلی روکنے کے لئے حفاظتی اور ہلکے رنگوں کے لباس کا استعمال ضروری ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پسوﺅں اور جراثیموں سے بچنے کے لئے منظور شدہ کیمیکل استعمال کرنا چاہئیں، جلد پر حفاظتی لوشن استعمال کرنا چاہیے جبکہ پسوﺅں سے متاثرہ پودوں، درختوں اور کھیتوں کھلیانوں سے بھی دور رہنا چاہیے۔

کینسر جیسی مہلک بیماری اور جس میں خطرناک موجودگی کا صرف انسان کی گردن دیکھ کر پتہ لگایا جا سکتا ہے ، مگر کیسے ؟ آپ بھی جانئے

وائرس کی جانوروں سے انسانوں میں منتقلی کو روکنے کے لئے جانوروں اور ان کے گوشت کو براہ راست چھونے سے اجتناب کرنا چاہیے۔ جانوروں یا گوشت کو چھونے کے لئے حفاظتی دستانے استعمال کریں۔

اگر آپ کانگو وائرس سے متاثرہ کسی مریض کی دیکھ بھال کررہے ہیں تو مریض کو براہ راست چھونے سے اجتناب کریں۔ ہمیشہ حفاظتی دستانے اور مخصوص لباس استعمال کریں اور مریض کی تیمارداری یا عیادت کی صورت میں صفائی کا خاص خیال رکھیں اور خصوصاً ہاتھوں کو اچھی طرح اور باقاعدگی سے دھوئیں۔

فیڈرل گورنمنٹ پولی کلینک ہسپتال کے ڈاکٹر شریف استوری کا کہنا تھا کہ کانگو وائرس عموماً جانوروں اور خصوصاً پسوﺅں سے انسانوں میں منتقل ہوتا ہے، لہٰذا صفائی کا خاص خیال رکھیں اور بیمار جانوروں سے دور رہیں۔

مزید : تعلیم و صحت