چارسدہ‘ پولیس اور سیاحوں کے درمیان آنکھ مچولی عید کے تیسرے روز بھی جاری رہی 

  چارسدہ‘ پولیس اور سیاحوں کے درمیان آنکھ مچولی عید کے تیسرے روز بھی جاری ...

  

چارسدہ (بیورو رپورٹ) چارسدہ میں دریا سوات خیالی منظورے کے مقام پر پولیس اور سیاحوں کے درمیان آنکھ مچولی عید کے تیسرے روز بھی جاری رہی،پولیس نے تین دن مسلسل سیاحوں کی دوڑیں لگادی اکثر سیاح پولیس کو دیکھتے  ہی خوراکے سازو سامان بھی چھوڑدی۔ علاقے کے مشران اور سماجی شخصیات نے پولیس اور ضلعی انتظامیہ کی اس اقدام کو سراہا اور مطالبہ کیا کہ پولیس روزانہ کی بنیاد پر خیالی منظورے کے مقام پر دریا کے دونوں اطراف میں گشت کریں تاکہ قیمتی جانوں کی ضیاع کو روکا جا سکے۔ تفصیلات کے مطابق صوبائی حکومت جانب سے کورونا وباء کے پیش نظر پارکس اور تفریحی مقامات پر پابندی لگائی گئی تھی اور س حوالے سے ہر ضلع کے انتظامیہ کو احکامات جاری کیئے تھے تاہم عید کے موقع پر  شہریوں کی جانب سے پابندی کے باوجود بڑی تعداد میں تفریحی مقامات کا رخ کرنے لگے۔چارسدہ میں دریا سوات خیالی منظورے کے مقام پر بھی عید کے دنوں میں بڑی تعداد میں سیاحوں نے اُدھم مچائی تھی تاہم پولیس کی جانب سے خلاف ورزی کرنے والوں کوسیاحوں کو پکڑنے کیلئے چھاپوں کا سلسلہ جارہی رہا  جس کی وجہ تین دن مسلسل  پولیس اور سیاحوں کے مابین آنکھ مچولی جاری رہی، علاقہ کے سیاسی اور سماجی شخصیات نے ضلعی انتظامیہ اور پولیس کے اقدام کے اقام کو سراہا ہے علاقہ کے معززین نے مطالبہ کیا کہ ضلعی انتظامیہ کو عید کے علاوہ بھی اپنی کاروائیاں جاری رکھنے چاہئے تاکہ علاقہ میں غیر اخلاقی سرگرمیوں سد باب ممکن ہو یہاں پر یہ بات قابل ذکر ہے کہ دریا سوات خیالی منظورے کے مقام پر اکثر سیاح آتے رہتے تھے جو وہاں پر موسیقی، شراب، چرس، ہوائی فائرنگ اوردیگر غیر اخلاقی محفل سجا تے  ہیں جسکی وجہ سے علاقے میں پر امن ماحول خراب ہونے کا خدشہ موجود ہے علاقہ کے سماجی اور سیاسی شخصیات نے مطالبہ کیا ہے ضلعی انتظامیہ روزانہ کی بنیاد اپنی کاروائیاں جاری رکھے تاکہ علاقے کے عوام کو ریلیف مل سکے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -