تھانہ کینٹ، ملزم سے پکڑی گئی گاڑی غائب  کرنیکا منصوبہ فلاپ، رپٹ لکھ کر ایس ایچ  او  بری الذمہ،ذرائع معاملات اوکے

تھانہ کینٹ، ملزم سے پکڑی گئی گاڑی غائب  کرنیکا منصوبہ فلاپ، رپٹ لکھ کر ایس ...

  

 ملتان (وقا ئع نگار)   پولیس تھانہ کینٹ نے پولیس افسران کو گمراہ کرکے(بقیہ نمبر44صفحہ6پر)

 نشتر ہسپتال سے گرفتار ہونے والا تھانہ کلرکہار چکوال میں امانت میں خیانت مقدمہ کا اشتہاری ملزم کو خاص خواہشات پوری ہونے پر چھوڑ دیا گیا۔جبکہ ملزم سے قبضے میں لی گئی لاکھوں روپے مالیت کی گاڑی کو ہڑپ کرنے کا منصوبہ متعلقہ پولیس اور مدعی مقدمہ نے ناکام بنادیا۔کلر کہار پولیس کی مداخلت پر ایک ہی دن میں لاوارٹ کی رپٹ لکھ کر حوالے کردی گئی ہے۔باوثوق ذرائع نے اپنا نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا ہے کہ پولیس تھانہ کینٹ کی چوکی نے نشتر ہسپتال سے تھانہ کلر کہار ضلع چکوال کے مقدمہ نمبری 229/19 مورخہ 30/6/19 جرم 406 کے تحت درج ہوا۔جس میں ممتاز حسین نامی ملزم اشتہاری تھا۔کو حراست میں لیا۔جوکہ ملتان پیرا غائب روڈ محلہ قیصر پورہ کا رہائش پذیر تھا۔نشتر چوکی پولیس نے مذکورہ زیر حراست ملزم کے بارے میں ایس ایچ  او  کو بتایا گیا۔ذرائع کے مطابق بعد ازاں کچھ افراد کہ مداخلت پر ملزم ممتاز حسین کو " خاص وجہ " سے چھوڑ دینے کا انکشاف ہوا ہے۔لیکن اسی دوران اسکی قبضے میں لی گئی گاڑی 900/ sgn  ٹو ڈی کرولا ماڈل 2006 کو ہڑپ کرنے کی نیت سے غائب کردیا گیا۔کچھ دنوں بعد ممتاز حسین کی گرفتاری اور گاڑی کو قبضے میں لینے کے حوالے سے تھانہ کلر کہار پولیس کو اطلاع ملی۔تھانیدار مدعی مقدمہ کے ہمراہ ملتان آیا۔ایس ایچ او کو ملا۔اور ایس ایچ او نے تین دن بعد آنے کا کہا۔مقامی پولیس اور مدعی دوبارہ  دو دن بعد آگئے۔جس پر ایس ایچ او کینٹ کو غصہ آیا۔اور اس نے کل کہار کے تھانیدار  سے سیدھے منہ بات نا کی۔ذرائع کے مطابق معاملہ ہاتھ نکلتا دیکھ کر ایس ایچ او ایک دن کے اندر گاڑی کی لاوارث ہونے کی رپٹ لکھی۔حالانکہ اسی دن چکوال کا تفتیشی افسر  بھی ملتان پہنچا تھا۔مزید برآں پولیس تھانہ کینٹ نے پرائیوٹ افراد کا ایک گروپ بنایا ہوا ہے۔جو ملزمان سے ریکوری کی مد لاکھوں روپے کما کر دے رہے ہیں۔اس میں اعجاز نامی پرائیوٹ شخص سرفہرست ہے۔جبکہ ہیڈ کانسٹیبل بشیر کٹ تھانہ میں سب اچھے برے کاموں کو کرنے میں سب سے آگے ہے۔

اوکے

مزید :

ملتان صفحہ آخر -