شاہ محمود قریشی گزشتہ روز لائن آف کنٹرول پر کیوں گئے؟ خود ہی بتادیا

شاہ محمود قریشی گزشتہ روز لائن آف کنٹرول پر کیوں گئے؟ خود ہی بتادیا
شاہ محمود قریشی گزشتہ روز لائن آف کنٹرول پر کیوں گئے؟ خود ہی بتادیا

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی  نے  دورہ لائن آف کنٹرول چری کوٹ سیکٹر اور مظفر آباد کے حوالے سے بات چیت کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ وہاں کشمیریوں سے یکھجہتی کااظہارکرنے کے لیے گئے تھے۔

انہوں نے کہا ہےکہ مقبوضہ کشمیر پر  ہمارا مؤقف تبدیل نہیں ہوا اور ہماری منزل سری نگر ہے۔

جیو نیوز کے مطابق وزارت خارجہ میں 5 اگست کےحوالے سے وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کی زیرصدارت ایک  اجلاس ہوا جس میں معاون خصوصی قومی سلامتی معیدیوسف، سیکرٹری خارجہ سہیل محمود، وفاقی سیکرٹری اطلاعات اکبردرانی اور اعلی عسکری حکام نے شرکت کی۔

اس دوران وزیرخارجہ نے دورہ لائن آف کنٹرول چری کوٹ سیکٹر اور مظفر آباد کے حوالے سے اجلاس کے شرکا کو آگاہ کیا۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ لائن آف کنٹرول پر بھارتی فوج نہتے اور معصوم شہریوں کو گولیوں کا نشانہ بنا رہی ہے، کشمیری قوم بھارت کے 5 اگست کے یکطرفہ اقدامات کو یکسر مسترد کر چکی ہے اور پوری قوم 5 اگست کو متحد ہوکر مظلوم کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے یوم استحصال منائے گی، مظلوم کشمیریوں کی آواز کو دنیا کے ہر فورم پر اٹھائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ لائن آف کنٹرول پر بھارت مسلسل سیز فائر کی خلاف ورزی کررہاہے،  ہم لائن آف کنٹرول پر شہریوں سے اظہار یکجہتی کے لیے گئے، بھارت کو واضح پیغام دینا تھا کہ 5 اگست کے اقدامات پوری کشمیری قوم نے مسترد کردیے۔ 

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ مظفر آباد میں کشمیری قیادت کو اعتماد میں لیا گیا،  تمام سیاسی جماعتوں کو دفتر خارجہ میں دعوت دی گئی ہے،  مسئلہ کشمیر پر تمام سیاسی جماعتوں کو مشاورت کے لیے دعوت دی ہے ، اہم معاملوں پر کابینہ کو اعتماد میں لیا جائے گا۔

مزید :

قومی -