افغانستان کے وزیر دفاع کے گھر پر طالبان کا حملہ

افغانستان کے وزیر دفاع کے گھر پر طالبان کا حملہ

  

کابل (ڈیلی پاکستان آن لائن) افغانستان کے قائم مقام وزیر دفاع بسم اللہ محمدی کے گھر پر کار بم دھماکے میں ایک خاتون سمیت آٹھ افراد ہلاک اور 20 زخمی ہوگئے۔ طالبان نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

طلوع نیوز  کے مطابق منگل اور بدھ کی درمیانی شب قائم مقام وزیر دفاع کی کابل میں رہائش گاہ پر مقامی وقت کے مطابق رات آٹھ بجے کار بم دھماکہ کیا گیا۔ پہلے کار کو دھماکے سے اڑایا گیا اور اس کے بعد چار مسلح افراد نے قریبی گھر میں داخل ہو کر فائرنگ شروع کردی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ تین حملہ آور رکن اسمبلی اعظم محسنی کے گھر میں داخل ہوئے تاہم وہ اس وقت گھر پر موجود نہیں تھے۔

سیکیورٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ حملہ آوروں کی تعداد چار سے سات تھی۔ جس وقت حملہ ہوا اس وقت وزیر دفاع بسم اللہ محمدی گھر پر موجود نہیں تھے۔ اس حملے کی ذمہ داری طالبان کی جانب سے قبول کی گئی ہے اور اعلان کیا گیا ہے کہ وہ آئندہ بھی سرکاری حکام کو نشانہ بنائیں گے۔

دوسری جانب افغان عوام کی جانب سے وزیر دفاع کے گھر پر حملے کے بعد افغان سیکیورٹی ایجنسیز کی صلاحیتوں پر سوال اٹھائے گئے ہیں۔ طلوع نیوز کے مطابق عوام کا کہنا ہے کہ اگر وزیر دفاع ہی محفوظ نہیں ہے تو پھر وہ عوام کی حفاظت کیسے کرسکتا ہے؟

مزید :

بین الاقوامی -