یونیورسٹی میں نقص عامہ کی ذمہ دار انتظامیہ اور پنجاب حکومت کے وزراءہیں ،ترجمان جمعیت

یونیورسٹی میں نقص عامہ کی ذمہ دار انتظامیہ اور پنجاب حکومت کے وزراءہیں ...

لاہور(ایجوکیشن رپورٹر)اسلامی جمعیت طلبہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ پنجاب یونیورسٹی میں نقص عامہ کی ذمہ دار پنجاب یونیورسٹی انتظامیہ اور پنجاب حکومت کے وزراءہیں ۔جن کے جارحانہ اقدامات کی وجہ سے نہ صرف یونیورسٹی کا امن تباہ ہواہے بلکہ شہرلاہور کی عوام کو بھی مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے جمعہ کے روز ہونے والے واقعے میں طلبہ پر ٹیچرز تشدد کا جھوٹا الزام لگا کر دہشت گردی کی دفعات لگا دیں جب کہ انسداددہشت گردی کی عدالت نے اسلامی جمعیت طلبہ کے مﺅقف کی تائید کر دی اور دیگر طلبہ کی ضمانتیں ہونا بھی اس بات کا ثبوت ہے کہ طلبہ پر سنگین مقدمات میں ڈال کر جمعیت کے تشخص کو مجروح کیا گیا ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایک بیان میں کیا انہوں نے مزید کہا کہ جمعے کے روز مذاکرات کے بہانے بلا کر پولیس سٹیشن سے پانچ طلبہ کو گرفتار کر لیا گیا جبکہ پیر کی صبح ہاسٹل میں چھاپہ مار کر ہاسٹل میں سوئے ہوئے طلبہ کوگرفتار کر لیا گیا اور ان کے حوالے سے یہ تاثر دیا گیا کہ انہوں نے اسلحے کے زور پر ہاسٹل پر قبضہ کیا ہوا ہے جبکہ ہاسٹل سے کسی قسم کا اسلحہ برآمد نہیں ہوا ، جس کی وجہ سے مجاہد کامران اور ریذیڈنٹ آفیسر کو سبکی اُٹھانا پڑھی اور اپنی شرمندگی کو چھپانے کے لئے بھنگ اور بوتلوں کا جھوٹا ڈرامہ رچایا گیا ،ترجمان جمعیت نے کہا کہ ہاسٹلز سے بے گناہ طلبہ کو کاروائی کر کے اٹھانا اور ان پر دہشت گردی کا مقدمہ قائم کرنا وائس چانسلر اور پنجاب حکومت کی انتقامی کارروائیوں کا منہ بولتا ثبوت ہے۔یونیورسٹی میں وائس چانسلر گروپ کے اساتذہ اپنی سیاست کو مضبوط کرنے کے لئے اسلامی جمعیت طلبہ کا نام استعمال کر رہے ہیں ۔ جمعیت پر جھوٹے الزامات لگا کر یونیورسٹی انتظامیہ بدعنوانی کو چھپانے کی کوشش کر رہی ہے۔ ترجمان جمعیت نے کہا کہ جب تک مجاہد کامران کو وائس چانسلر کو عہدے سے برطرف نہیں کیا جاتا ، پنجاب یونیورسٹی کے پرامن رہنے کے کوئی امکانات نہیں ، کیوں کہ پنجاب یونیورسٹی کا تشخص وائس چانسلر کی طلبہ سیاست میں براہ راست ملوث ہونے کی صورت میں مجروح ہوا ہے ۔ لہٰذا پنجاب حکومت اپنے ارکان کی جعلی ڈگریوں کو اصلی ثابت کروانے کے لئے وی سی کے غیر قانونی اقدامات کی سرپرستی کر رہی ہے۔ وزیر قانون کے اس بیان کہ ان طلبہ سے سختی سے نپٹا جائے گا کو اسلامی جمعیت طلبہ نے ریاستی دہشت گردی قرار دیا ہے۔پنجاب یونیورسٹی کے پرامن ماحول کو بچانے کے لئے وائس چانسلر اور ان کی کابینہ کو برطرف کیا جائے، ترجمان کا مزید کہنا تھا کی یونیورسٹی کو پولیس سٹیٹ بنانے کی کوشش کی جا رہی ہے جب کہ عدالتیں دہشت گردی جیسی دفعات ختم کر رہی ہیں، پولیس کو جامعہ سے باہر کیا جائے تاکہ کیمپس میں خوف و ہراس کی فضاءختم کی جا سکے ، پنجاب یونیورسٹی کے طلبہ گذشتہ ڈیڑھ ماہ سے وزیر تعلیم اور یونیورسٹی انتظامیہ سے رابطے میں تھے تاہم انتظامیہ کی ہٹ دھرمی کے نتیجے میں معاملات پرتشدد احتجاج کی صورت اختیار کر گئے ، یونیورسٹی میں جاری طلبہ حقوق کی جدوجہد کو جاری رکھا جائے گا۔نئے ہاسٹلز کی تعمیرات، بسوں کی خریداری تک یہ عمل جاری رہے گا۔

ترجما ن جمعیت

مزید : صفحہ آخر


loading...