ہندو انتہا پسند تنظیمیں مسلم کش فسادات پروان چڑھا رہی ہیں،خالد ولید

ہندو انتہا پسند تنظیمیں مسلم کش فسادات پروان چڑھا رہی ہیں،خالد ولید

لاہور(نمائندہ خصوصی)جماعۃالدعوۃ سیاسی امور کے کوآرڈینیٹر حافظ خالد ولید نے کہا ہے کہ ہندو انتہاپسند تنظیمیں منظم منصوبہ بندی کے تحت مسلم کش فسادات پروان چڑھا رہی ہیں۔ گائے ذبیحہ کے بہانے مسلمانوں کو بدترین تشدد کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔ کشمیریوں پر ظلم و تشدد اور بھارت میں ہندو انتہاپسندی کیخلاف کیخلاف بھرپور تحریک اٹھانے کی ضرورت ہے۔ مسئلہ کشمیر حل کئے بغیر خطہ میں امن قائم نہیں ہو سکتا۔ اپنے بیان میں انہوں نے کہاکہ بھارت میں گائے کے ذبیحہ پر پابندی جیسے فیصلوں سے پورے بھارت میں نظریہ پاکستان اجاگر ہو رہا ہے۔ مسلمانوں کے قتل اور ذبیحہ پر پابندیوں کے مسئلہ پر خاموشی اختیار کرنا جرم ہے۔ حکومت پاکستان اور تمام سیاسی و مذہبی جماعتوں کو اس سلسلہ میں بھرپور آواز بلند کرنی چاہیے۔ بھارت کی اسلام و پاکستان مخالف پالیسیوں سے کشمیر میں تحریک آزادی بہت مضبوط ہوئی ہے۔ انہوں نے کہاکہ بی جے پی کے برسراقتدار آنے کے بعد مقبوضہ کشمیر میں مظالم کی طرح بھارت میں مسلم کش فسادات میں بھی اضافہ ہوا ہے۔

پچھلے کئی ماہ سے گائے ذبیحہ کی افواہیں پھیلا کر مسلمانوں کا جینا دوبھر کیا جارہا ہے۔ اترپردیش میں بھی ہندو انتہاپسندوں نے یہی کھیل کھیلا اور گائے کا گوشت گھر میں رکھنے کی افواہ پھیلا کر اخلاق احمد نامی مسلمان کو پتھر مار مار کر شہید اور اس کے بیٹے کو شدید زخمی کر دیا گیا لیکن افسوسناک امر یہ ہے کہ مغربی ممالک اور بین الاقوامی اداروں کو ہندو انتہاپسندوں کی یہ دہشت گردی نظر نہیں آتی۔خالد ولید نے کہاکہ اس وقت پورے برصغیر میں نظریہ پاکستان پروان چڑھ رہا ہے۔حکومتوں نے اس سلسلہ میں جوکردار ادا کیا وہ تاریخ کا سیاہ باب ہے لیکن اللہ تعالیٰ اب حالات بدل رہا ہے۔کشمیر ان شاء اللہ پاکستان کا حصہ بن کر رہے گا۔ انہوں نے کہاکہ آج کشمیری قوم کا بچہ بچہ پاکستانی پرچم لیکر کھڑا ہے۔ جس طرح کشمیر میں پاکستانی پرچم لہرائے جارہے ہیں اور انڈیا میں ہندو انتہاپسندی جس شدت سے بڑھ رہی ہے۔ مسلم امہ کو متحد ہو کر بھارت سرکار کی دہشت گردی سے آگاہ کرنا چاہیے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4