مالی امداد ملے توکوئلے کا استعمال کم کرنے کو تیار ہیں،بھارت

مالی امداد ملے توکوئلے کا استعمال کم کرنے کو تیار ہیں،بھارت

نئی دہلی (آئی این پی )بھارت نے کہا ہے کہ پیرس میں ماحولیات سے متعلق کانفرنس میں جدید توانائی پیدا کرنے کی غرض سے اگر رقم فراہم کرنے پر کوئی معاہدہ ہوتا ہے تو وہ کوئلے کے استعمال کو کم کر دیگا۔برطانوی میڈیا کے مطابق بھارتی وفد میں شامل سینئر مذاکرات کار ڈاکٹر اجے ماتھر نے کہا کہ اگر ’زیادہ مہنگی‘ گرین توانائی کے لیے بطور مدد رقم مہیا کی جائے تو کوئلے کا استعمال محدود ہوسکتا ہے۔بھارت میں توانائی کی شدید قلت ہے اور کہا جارہا ہے کہ توانائی کی پیداوار بڑھانے کے لیے 2020 تک بھارت کوئلہ برآمد کرنے والا دنیا کا سب سے بڑا ملک ہوگا۔اس کانفرنس سے قبل بھارت نے ماحولیات سے متعلق جو دستاویزات مہیا کی تھیں اس کے مطابق مستقبل میں ملک میں کوئلے کا استمعال کافی حد تک بڑھ جائے گا۔لیکن بہت سے ممالک نے بھارت کے اس بیان کا یہ کہہ کر خیرم قدم کیا ہے کہ اس سے ایک نئے معاہدے کے طے ہونے کے امکانات مزید روشن ہوگئے ہیں۔بھارتی دستاویزات کے مطابق مستقبل میں بھی توانائی کی پیداوار میں کوئلے کا کردار اہم رہے گا۔اس کے مطابق ملک میں کوئلے کی پیداوار بڑھانے کے منصوبے کے تحت 2020 تک اسے تقریبا ڈیڑھ ارب ٹن تک کر دیا جائیگا۔

مزید : عالمی منظر