نیب نے زرداری کی بریت کے خلاف اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست دائر کردی

نیب نے زرداری کی بریت کے خلاف اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست دائر کردی

اسلام آباد(آن لائن) قومی احتساب بیورو (نیب) نے سابق صدر اور پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کی ایس جی ایس اور کوٹیکنا ریفرنسز میں بریت کے خلاف اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست دائر کردی ہے،جمعرات کے روزنیب کی جانب سے اسلام آباد ہائی کورٹ میں بریت کے خلاف دائر درخواست میں عدالت سے احتساب عدالت کے فیصلے کو کالعدم قرار دینے کی استدعا کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ ٹرائل کورٹ نے ملزم کے جرم کی سنگینی کا اندازا کئے بغیر جلد بازی میں فیصلہ سنایا ہے،درخواست میں کہا گیا ہے کہ ٹرائل کورٹ نے مفروضوں اور قیاس آرائی کی بنیاد پر فیصلہ دیا جس کی قانون کے نظر میں کوئی اہمیت نہیں ہے،نیب کی درخواست میں مزید کہا گیا ہے کہ ریفرنسز کی سماعت کے دوران ٹرائل کورٹ نے پراسیکیوشن سے اصل دستاویزات طلب کیں جس پر استغاثہ کے گواہ اور نیب کے سابق ڈپٹی چیئرپرسن حسان وسیم افضل نے عدالت کو بتایا کہ وہ پہلے ہی اصل دستاویزات جسٹس احسان اللہ حق چوہدری اور جسٹس راجہ محمد خورشید پر مشتمل احتساب بنچ کو پیش کرچکے ہیں، لیکن ان کے اس جواب کو رد کردیا گیا جبکہ ٹرائل کورٹ نے لاہور ہائی کورٹ کے احتساب بنچ سے اصل دستاویزات طلب کرنے کی زحمت بھی گوارہ نہیں کی لہذا اسلام آباد ہائی کورٹ آصف زرداری کی ایس جی ایس اورکوٹیکنا ریفرنسز میں بریت کے فیصلے کو کالعدم قرار دے۔واضح رہے کہ 24 نومبر کو اسلام آباد کی احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے ایس جی ایس اور کوٹیکنا ریفرنسز میں آصف علی زرداری کو عدم شواہد کی بنا پر باعزت بری کردیا تھا، آصف علی زرداری اور بے نظیر بھٹو کے خلاف دونوں ریفرنسز 1998 میں سابق چیئرمین نیب سیف الرحمان کے دور میں بنائے گئے تھے،دونوں ریفرنسز میں آصف علی زرداری اور بے نظیر بھٹو پر غیر ملکی کمپنیوں کو شپنگ کے ٹھیکے دینے میں کمیشن وصول کرنے کا الزام تھا

مزید : صفحہ اول