سندھ حکومت کا گندم اور اس کی مصنوعات ایکسپورٹ کرنے کا فیصلہ

سندھ حکومت کا گندم اور اس کی مصنوعات ایکسپورٹ کرنے کا فیصلہ

لاہور(کامرس رپورٹر)پاکستان فلور ملز ایسوسی ایشن کے شدید مطالبے پر سندھ حکومت نے گندم اور اس کی مصنوعات ایکسپورٹ کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے تاہم پنجاب حکومت نے خاموشی اختیار کر رکھی ہے بلوچستان اور کے پی کے حکومتوں نے بھی سرپلس گندم سے جان چھڑانے کے لئے وفاقی حکومت سے مدد مانگ لی چاروں صوبے سرپلس گندم پر سالانہ دس ارب روپے سود کی مد میں بنکوں کو ادا کر رہے ہیں۔ ذرائع کے مطابق محکمہ خوراک سندھ کے سیکریٹری خوراک اور پاکستان فلور ملز ایسوسی ایشن کے درمیان باہمی مشاورت سے گندم ایکسپورٹ کی معیاد میں توسیع کی اجازت کے لئے تیار سمری وفاقی وزارت خزانہ کو ارسال کر دی ہے امکان ہے کہ آئندہ چندروز میں سندھ حکومت کو گندم ایکسپورٹ کرنے کی اجازت دے دی جائے گی سندھ کے پاس چھ لاکھ ٹن گندم سرپلس ہے ۔ذرائع کے مطابق پنجاب کے پاس 20لاکھ ٹن گندم فالتو ہے لیکن پنجاب کی افسر شاہی کنفیوزن کا شکار ہے اور وہ ایکسپورٹ کی معیاد میں توسیع نہیں چاہتے حالانکہ پنجاب حکومت کو تینوں صوبوں کے مقابلے میں شرح سود زیادہ ادا کرنا پڑ رہا ہے۔ سیکریٹری خوراک پنجاب نے ایکسپورٹ میں توسیع کے لئے سمری تیار کر رکھی ہے لیکن غیر متعلقہ فورسز کے دباؤ پر وزارت خزانہ کو سمری ارسال کرنے سے گریزاں ہے۔ذرائع کے مطابق اس بات قوی امکان ہے کہ اس کے بعد پنجاب حکومت بھی اربوں روپے کے سود سے بچنے کے لئے کوئی جامع پالیسی اختیارر کرے گی ۔

مزید : صفحہ آخر