ایران سے نمٹنے کیلئے خطے کے تمام ممالک کو متحد ہونا پڑے گا: امریکا

ایران سے نمٹنے کیلئے خطے کے تمام ممالک کو متحد ہونا پڑے گا: امریکا

واشنگٹن(این این آئی)لبنان کے وزیراعظم سعد حریری کے گذشتہ ماہ سعودی عرب میں قیام کے دوران وزارت عظمیٰ سے دیے گئے استعفے کے بعد ملک میں پیدا ہونے والی صورتحال ایک دفعہ پھر سے معمول کی طرف جارہی ہے۔ دوسری طرف امریکا اور دیگر عالمی اسٹیک ہولڈرز نے بھی لبنان کی سیاسی صورت حال میں استحکام پر اطمینان کا اظہار کیا ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق امریکی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا کہ امریکی انتظامیہ لبنان میں سیاسی استحکام، امن وامان کے قیام، حکومت کے تسلسل اور باہمی احترام کے تحت حکومتی امور کو نمٹانے کا پابند ہے۔امریکی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا کہ ان کے ملک کی عرب خطے کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی ایرانی سازشوں کے حوالے سے پالیسی میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ طے شدہ ہے کہ ایران پاسداران انقلاب، حزب اللہ ملیشیا اور دیگر عسکری گروپوں کی مدد کے ذریعے عراق، شام، یمن اور دوسرے عرب ملکوں میں مداخلت کررہا ہے۔ایک سوال کے جواب میں امیرکی عہدیدار نے کہا کہ ان کی حکومت کی اولین ترجیح شام میں امن وامان کا قیام اور سیاسی عمل کی بحالی ہے۔ اسی طرح امریکا لبنان کے تمام اداروں کے استحکام کا خواہاں ہے۔ جہاں تک ایران کی مخالفت اور اس کے خلاف مزاحمت کا سوال ہے تو اس کا جواب یہ ہے کہ ایران کے خلاف مزاحمت طویل المدت منصوبہ ہے۔ اس کے لیے خطے کے تمام ممالک کو آپس میں متحد ہونا ہوگا۔

مزید : عالمی منظر