’’کوئٹہ میں ڈی آئی جی حامد شکیل صابر پر حملہ کرنے والوں کو اس ملک نے پچاس ہزار ڈالر دئیے تھے ‘‘افغان پارلیمنٹ کے اہم ترین رکن کا انتہائی خوفناک انکشاف

’’کوئٹہ میں ڈی آئی جی حامد شکیل صابر پر حملہ کرنے والوں کو اس ملک نے پچاس ...
’’کوئٹہ میں ڈی آئی جی حامد شکیل صابر پر حملہ کرنے والوں کو اس ملک نے پچاس ہزار ڈالر دئیے تھے ‘‘افغان پارلیمنٹ کے اہم ترین رکن کا انتہائی خوفناک انکشاف

  

لاہور (ایس چودھری )بلوچستان میں پولیس کے خلاف بڑھتی ہوئی دہشت گردی کاررائیوں میں پاکستان کے دشمن بھارت کا ہاتھ ہے ،سنئیر صحافی و تجزیہ نگار حامد میر نے دورہ کابل کے دوران نیشنل سالیڈیریٹی موومنٹ کے سربراہ پیر سید اسحاق گیلانی سے ملاقات کے دوران اس بات کا انکشاف کیا ہے کہ انہیں گیلانی صاحب نے بتایا ہے کہ بھارت پاکستان کے خلاف کس حد تک آگے جارہا ہے۔بلوچستان میں ڈی آئی جی پولیس پر خودکش حملہ بھارت نے کرایا ہے۔ پیر سید اسحاق گیلانی افغانستان پر روسی قبضے کے بعد 26سال تک پشاور میں مقیم رہ چکے ہیں ۔ 2002ء سے وہ افغانستان کی سیاست میں سرگرم ہیں اور پکتیکا سے افغان پارلیمنٹ کے رکن بھی منتخب ہو چکے ہیں۔حامد میر نے اپنے کالم میں پیر سید اسحاق گیلانی کے حوالے سے لکھا ہے کہ انہوں نے دعویٰ کیا کہ کچھ دن پہلے کوئٹہ میں ڈی آئی جی حامد شکیل صابر پر حملے کا منصوبہ بنانے والوں کو افغانستان میں پچاس ہزار ڈالر ادا کئے گئے۔ میں نے پوچھا کہ یہ ڈالر کس نے ادا کئے تو پیر صاحب نے کہا ’’انڈیا‘‘۔ انہوں نے کہا کہ ضروری نہیں کہ افغانستان کے راستے سے پاکستان میں ہونے والی دہشت گردی میں ہمارے ادارے بھی ملوث ہوں لیکن غیر ملکی طاقتیں سب جانتی ہیں وہ چاہیں تو ان سازشوں کو روک سکتی ہیں۔ پیر سید اسحاق گیلانی کا کہنا تھا کہ پاکستان اور افغانستان کو ایک دوسرے پر الزامات لگانے اور ایک دوسرے کے خلاف لڑنے کی بجائے اپنے مشترکہ دشمنوں کے خلاف متحد ہو جانا چاہئے۔

مزید : قومی