سندھ پولیس میں اے آئی جی سے ایس پی رینک تک کے عہدے خالی

سندھ پولیس میں اے آئی جی سے ایس پی رینک تک کے عہدے خالی

کراچی (کرائم رپورٹر)سندھ پولیس میں ایڈیشنل آئی جی سے لے کر ایس پی رینک تک کے عہدے خالی ہیں۔اعداد و شمار کے مطابق افسران سے محروم پوسٹوں کی تعداد درجنوں میں ہے جبکہ اعلی حکام نے کام چلانے کے لیے ایک ایک افسر کو کئی کئی اضافی ذمہ داریاں تفویض کی ہوئی ہیں۔پولیس ذرائع کے مطابق آپریشن اور انوسٹی گیشن جیسے اہم اور حساس شعبوں میں بھی مختلف مناصب خالی ہیں جس کی وجہ سے پرفارمنس شدید متاثر ہورہی ہے۔ذرائع کے مطابق سندھ پولیس میں اس وقت ایڈیشنل آئی جی کے 4 عہدے افسران کے منتظر ہیں جبکہ 3ایڈیشنل آئی جیز کو 6عہدوں کی ذمہ داریاں دی ہوئی ہیں۔ذرائع کے مطابق ڈاکٹر امیر شیخ ایڈیشنل آئی جی کراچی کے ساتھ ساتھ ٹریفک پولیس کے سربراہ کی بھی ذمہ داریاں ادا کررہے ہیں۔ آفتاب پٹھان کو ایڈیشنل آئی جی سندھ، اسٹیبلشمنٹ اور ٹریننگ کے عہدوں کی بھی ذمہ داریاں ادا کرنا پڑ رہی ہیں جبکہ ولی اللہ دل بھی بیک وقت ایڈیشنل آئی جی سی ٹی ڈی اور اسپیشل برانچ تعینات ہیں۔ذرائع کے مطابق سندھ پولیس میں ایڈیشنل آئی جی ویلفئیر لاجسٹک اینڈ فنانس کا عہدہ گزشتہ کئی ماہ سے افسر کی تعیناتی کا منتظر ہے۔ذرائع کے مطابق ڈی آئی جی عبد الخالق شیخ بھی بیک وقت ہیڈ کوارٹرز اور اسٹیبلشمنٹ کے سربراہ کی حیثیت سے فرائض سرانجام دے رہے ہیں۔ اسی طرح مقصود میمن بیک وقت اے آئی جی فارنزک اور ڈی آئی جی آپریشن تعینات ہیں۔سندھ پولیس کے ذرائع کے مطابق ایس پی مدد گار 15کے عہدے پر بھی کوئی افسر تعینات نہیں ہے اور اس عہدے کا اضافی چارج پیر محمد شاہ کے سپرد ہے۔ذرائع کے مطابق ایس پی کیماڑی، ایس پی صدر، ایس پی اورنگی ٹاؤن، ایس پی سائٹ، ایس پی بلدیہ ٹاؤن، ایس پی سٹی، ایس پی نیو کراچی، ایس پی گلشن اقبال ، ایس پی لیاقت آباد، ایس پی شاہ فیصل،ایس پی لانڈھی اور ایس پی گلبرک کے عہدے بھی خالی ہیں۔ذرائع کے مطابق ضلع ملیر میں ایس پی انوسٹی گیشن اور آپریشن دونوں عہدے خالی ہیں اور اپنے افسران کی تعیناتی کے منتظر ہیں۔ ایس پی انوسٹی گیشن ملیر کا عارضی چارج بھی ایس پی گڈاپ اعظم جمالی کے سپرد ہے۔سرکاری کاغذات کے مطابق شعبہ تفتیش میں ایس پی انوسٹی گیشن ساؤتھ ٹو کا عہدہ خالی ہے اورڈرائیونگ لائسنس برانچ بھی ایس پی سطح کے افسر سے تاحال محروم ہے۔اسپیشل سیکیورٹی یونٹ میں غلام مرتضی تبسم بھی بیک وقت دو عہدوں پر براجمان ہیں۔

مزید : کراچی صفحہ اول