آسٹریلیا کیخلاف پاکستانی ٹیم کی بدترین کارکردگی، وفاقی وزراء بھی پھٹ پڑے

  آسٹریلیا کیخلاف پاکستانی ٹیم کی بدترین کارکردگی، وفاقی وزراء بھی پھٹ پڑے

  



اسلام آباد(آئی این پی) آسٹریلیا کیخلاف سیریز میں پاکستانی ٹیم کی بدترین کارکردگی پر وفاقی وزراء بھی بھٹ پڑے۔ وفاقی وزیر برائے بحری امور علی زیدی نے کہا ہے کہ سرفراز احمد نے پاکستان کو ٹی ٹوینٹی چیمپئن بنایا مگر مصباح اور وقار یونس کی جوڑی سابق کپتان کو پسند نہیں کرتی، سلیکشن کے بعد قومی ٹیم آسٹریلیا جارہی تھی میں اسی وجہ سے خاموش رہا، یہ سمجھ سے بالاتر ہے کہ جس نے پاکستان کو ٹی ٹوینٹی چیمپئن بنایا اسے کرکٹ بورڈ نے ٹیم سے ڈراپ کیوں کردیا؟۔ان کا کہنا تھا کہ سرفرازکی قیادت میں پاکستان نے بھارت کو شکست دے کر چیمپئنزٹرافی جیتی، وہ پاکستان کے کامیاب ترین کپتانوں میں سے ایک تھے مگر مصباح اور وقار کی جوڑی نے عہدہ سنبھالتے ہی سرفراز کو ڈراپ کردیا۔سرفرازکیڈراپ ہونے پر ہرکوئی کہہ رہاہے دال میں کچھ کالاہے، مصباح الحق اور وقار یونس دونوں سرفرازکو ناپسندکرتے ہیں اور ان کی پسند نا پسند کی بھاری قیمت پاکستان کو ادا کرنا پڑی۔علی زیدی کا کہنا تھا کہ کرکٹ ٹیموں میں گروپ بندی عام ہے مگر اس پر پردہ ڈال کر رکھا جاتا ہے۔وفاقی وزیر نے مطالبہ کیا کہ اب وقت ہے کہ ہر سطح پر کڑے اقدامات کیے جائیں اور کرکٹ کو ایک بار پھر سے بہتر بنایا جائے۔دوسری جانب وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے تسلیم کیا ہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ کے معاملات صحیح نہیں چل رہے ہیں۔ کرکٹ بورڈ کے معاملے اور قومی ٹیم کی کارکردگی پر واقعی کچھ کرنا پڑے گا۔انھوں نے کرکٹ بورڈ کے اخراجات پر بھی سوال اٹھایا اور کہا کہ جس طرح کی شاہ خرشیاں ہیں، اس پر دیکھنا ہوگا۔انھوں نے دو ٹوک کہا کہ کرکٹ بورڈ کی معاملات صحیح نہیں چل رہے،ٹیم کے خراب حالات کی ذمہ داری کرکٹ بورڈ پر آتی ہے۔ انھوں نے پی ٹی آئی رہنما نعیم الحق کے بورڈ میں تبدیلی سے متعلق بیان پر اتفاق کیا۔

مزید : کھیل اور کھلاڑی