منشیات برآمدگی کیس:ملزم کو رہاکرنیکا حکم

منشیات برآمدگی کیس:ملزم کو رہاکرنیکا حکم

  



ملتان ( خبر نگار خصو صی) ایڈیشنل سیشن جج ملتان نے امراض دل میں مبتلا قیدی کو کارڈیالوجی ہسپتال منتقل نہ کرنے پر سپرنٹینڈنٹ جیل کے خلاف درخواست اور ملزم کے خلاف منشیات کیس کے(بقیہ نمبر39صفحہ7پر)

ٹرائل کی سماعت کی اور ملزم کے جیل میں کاٹے دنوں کو سزا قرار دیتے ہوئے رہا کرنے جبکہ سپرنٹینڈنٹ کے خلاف درخواست کو داخل دفتر کرنے کا حکم دیا ہے۔قبل ازیں فاضل عدالت میں منشیات کے مقدمہ میں ملوث 53 سالہ شفیع اللہ نے بیماریوں بارے درخواست دی اور موقف اختیار کیا تھا کہ اس کے خلاف تھانہ اینٹی نارکوٹکس فورس نے 7 فروری 2018 کو 16 کلو منشیات برآمد ہونے کا مقدمہ درج کیا تھا وہ اب دل کا مریض بن چکا ہے اور دن بدن اسکا جسم ڈھلتا جارہا ہے اس لیے چوہدری پرویز الٰہی انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی میں شفٹ کیا جائے۔ وہ عدم ریکارڈ یافتہ ہے اور اس مقدمہ سے قبل کسی کیس میں ملوث نہیں رہا اس لیے اللہ تعالٰی کی عدالت اور فاضل عدالت سے معافی کا طلبگار ہے۔جس پر فاضل عدالت نے سپرنٹینڈنٹ ڈسٹرکٹ جیل کو 2 نومبر کو قیدی کو ہسپتال منتقل کرنے کا حکم دیا تھا لیکن حکم عدولی کرنے پر سپرنٹینڈنٹ کو عدالت میں طلب کر لیا تھا جن کی جانب سے گزشتہ روز رپورٹ جمع کرائی گئی تھی۔ دوسری جانب عدالت نے ملزم کے خلاف استغاثہ کا بھی فیصلہ کردیا اور ملزم کے جیل میں گزارے دنوں کو سزا قرار دیتے ہوئے ملزم کو رہا کردیا ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر