سیالکوٹ واقعہ پر شریعت کیا کہتی ہے؟ بڑی مذہبی جماعت  کے سربراہ نے کھل کر بتا دیا 

سیالکوٹ واقعہ پر شریعت کیا کہتی ہے؟ بڑی مذہبی جماعت  کے سربراہ نے کھل کر بتا ...
سیالکوٹ واقعہ پر شریعت کیا کہتی ہے؟ بڑی مذہبی جماعت  کے سربراہ نے کھل کر بتا دیا 

  

 لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان کے سربراہ سینیٹر پروفیسر ساجد میر نے کہا ہے کہ قانون کو ہاتھ میں لینے کا کسی کو حق نہیں ہے،سیالکوٹ واقعہ کے لیے مذمت کے الفاظ کم ہیں،دین اور دنیا کے کسی قانون میں بڑے سے بڑے مجرم کو سزادینے کا اختیار صرف ریاست کو حاصل  ہوتاہے۔

مرکزی جمعیت اہل حدیث سعودی عرب کے امیر مولانا عبدالمالک مجاہد اور گلاسکو برطانیہ کےامیرحاجی الطاف حسین کے اعزاز میں منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے پروفیسر ساجد میر نے کہا کہ  توہین رسالت ﷺ کے قانون کی افادیت مسلمہ ہے تاہم اس کا ناجائز استعمال روکنا ہو گا،اکثر دیکھنے میں آیا ہے کہ لوگ ذاتی اور سیاسی مفاد یا انتقام کی خاطر توہین کاالزام لگا دیتے ہیں، ایسے واقعات کی روک تھام کے لیے عوام میں شعور پیدا کرنے کی ضرورت ہےبلکہ الزام جھوٹا ثابت ہونے پر الزام لگانے والے کو سزا ملنی چاہیے۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ امر پر بھی باعث تشویش ہے کہ آج تک توہین رسالتﷺ یا توہین مذہب کے مرتکب ملزم کو سزا نہیں دی گئی۔تقریب کے انعقاد پر مہمانو ں نے میزبانوں کا شکریہ ادا کیا۔ تقریب سے ڈاکٹر عبدالغفور راشد، علامہ ریاض الرحمن یزدانی،علامہ شفیق خاں پسروری، مولانا عبدالباسط شیخوپوری،حافظ عامر صدیقی،حافظ سلمان اعظم، حافظ عتیق اللہ عمر، امتیاز مجاہد، ملک نور محمد اعوان،علامہ عبدالصمد معاز نے بھی خطاب کیا۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -