ایل سلواڈور میں صدر کے حکم پر گینگز کا گڑھ سمجھےجانے والے شہر میں 10 ہزار اہلکار تعینات

ایل سلواڈور میں صدر کے حکم پر گینگز کا گڑھ سمجھےجانے والے شہر میں 10 ہزار ...
ایل سلواڈور میں صدر کے حکم پر گینگز کا گڑھ سمجھےجانے والے شہر میں 10 ہزار اہلکار تعینات
سورس: Twitter

  

سان سلواڈور (ڈیلی پاکستان آن لائن) وسطی امریکہ کے ملک  ایل سلواڈور کے صدر نائب بوکیل نے ہفتے کے روز دارالحکومت سان سلواڈور کے ایک مضافاتی علاقے میں  سیکیورٹی فورسز کے  10 ہزار اہلکاروں  کی تعیناتی کا اعلان کیا۔ اس علاقے کو خطرناک گینگز کا گڑھ سمجھا جاتا ہے۔  یہ اقدام مارچ میں شروع ہونے والے گینگز کے خلاف  جنگ میں تازہ ترین اضافہ ہے۔

این ڈی ٹی وی کے مطابق صدر نائب بوکیل نے اپنے ایک ٹویٹ میں کہا کہ 'سویاپانگو کو  مکمل طور پر گھیر لیا گیا ہے۔ساڑھے آٹھ ہزار  سپاہی اور 1,500 ایجنٹوں نے شہر کو گھیرے میں لے لیا ہے، جبکہ پولیس اور فوج کی ایکسٹریکشن  ٹیموں کو ایک ایک کر کے گینگ کے تمام ارکان کو نکالنے کا کام سونپا گیا ہے۔'

حکومت کی طرف سے جاری کردہ تصاویر میں فوجیوں کو بھاری ہتھیاروں، ہیلمٹ اور بلٹ پروف جیکٹوں کے ساتھ جنگی گاڑیوں میں سفر کرتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔ میونسپلٹی کی آبادی تقریباً  تین لاکھ ہے اور اسے ماضی میں  قانون کے نفاذ کے لیے ناقابل تسخیر سمجھا جاتا تھا۔  صدر بوکیل نے گینگز کا مقابلہ کرنے کا اپنا منصوبہ شروع  کرتے ہوئے گینگز کے 50 ہزار سے زیادہ مبینہ ارکان کی گرفتاری کا حکم دیا تھا۔ وہ انہیں  دہشت گرد قرار دیتے ہیں۔مارچ میں ایک ہی ہفتے کے آخر میں درجنوں افراد کے قتل کے بعد گینگز کے صفائے کا منصوبہ شروع کیا گیا تھا جس کا  مقصد  ملک میں قتل عام کی شرح کو ایک دن میں دو سے کم پر لانا ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -