ٹیکس نیٹ بڑھانے سے ہی معاشی ترقی ممکن، مہیش مشرا

ٹیکس نیٹ بڑھانے سے ہی معاشی ترقی ممکن، مہیش مشرا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

ملتان(نیوزرپورٹر)برٹش ھائی کمیشن اسلام اباد کے اکانومی اینڈ ٹریڈ کے سربراہ مہیش مشرا نے کہا پاکستانی معیشت میں استحکام لانے کے لیے بھرپور معاونت فراہم کر رہے ہیں۔پاکستان کے صوبوں میں مختلف پروگرامز بھی جاری ہیں۔ ایس ایم ای سیکٹر میں روزگار کے مواقعے بڑھانے اور برطانوی منڈیوں تک پاکستانی بزنس مینوں کو رسائی میں درپیش مسائل کے خاتمے کے لیے بھی مدد فراہم کر رہے ہیں۔ان باتوں کا اظہار انہوں نے ایوان تجارت و صنعت ملتان میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر برٹش ہائی کمیشن اسلام اباد کے سینیئر اکنامک(بقیہ نمبر1صفحہ6پر )

 ایڈوائزر مسٹر لوئی ڈین ایوان تجارت و صنعت ملتان کے صدر میاں راشد اقبال، سینیئر نائب صدر ندیم احمد شیخ، خواجہ محمد حسین، خواجہ محمد عثمان، محمد طارق خان، شیخ فیصل سعید، داد الہی، اورنگزیب عالمگیر، سید ثاقب علی،چودہری محمد اعظم، صالحہ حسن، منیبہ المانی اور سیکرٹری ایوان محمد شفیق و دیگر موجود تھے۔مہیش مشرا نے کہا ہمارا مشن پاکستان کو معاشی طور پر مستحکم کرنا ہے اس حوالے سے کاروباری برادری کے ساتھ رابطے میں ہیں اور مختلف شہروں کا وزٹ بھی کر رہے ہیں دورہ ملتان بھی اسی سلسلے کی کڑی ہے۔ ملتانی آم کے حوالے سے انہوں نے کہا اس کی خوشبو اور ذائقہ منفرد ہے۔ ملتان آمد پر بلیو پاٹری انسٹیٹیوٹ کا وزٹ کیا جہاں ہنر مندوں کے شاہکار دیکھنے کو ملے۔ ملتانی بلیو پاٹری کا آج دنیا میں ایک منفرد مقام ہے جس کو بےحد پسند کیا جا رہا ہے۔مہیش مشرا نے مزید کہا کہ پاکستان کو ٹیکس نیٹ بڑھانے میں معاونت فراہم کر رہے ہیں تاکہ موجودہ ٹیکس گزاروں پر دبا کم ہو سکے اور نئے ٹیکس گزار سامنے آئیں اس حوالے سے فیڈرل بورڈ آف ریونیو حکام سے بھی بات چیت جاری ہے ۔انہوں نے کہا پاکستان کو صحت اور تعلیم کے حوالے جن چیلنجز کا سامنا ہے اس میں بھی بھرپور معاونت فراہم کی جا رہی ہے۔ پاکستان کے ایس ایم ای سیکٹر سے منسلک افراد کو مختلف ہنر کی تربیت دینا ازحد ضروری ہے۔ اس سے ایس ایم ای سیکٹر کی ترقی کی رفتار تیز ہوگی اور زمانے کے بدلتے ہوئے رجحانات کا بھی مقابلہ کرنے میں مدد ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ انفرا ضامن پروگرام کے تحت پاکستان میں ایک جدید اور غیر منافع بخش کریڈٹ بڑھانے کی سہولت فراہم کی گئی ہے۔انفرا ضامن کو ایشیا انویسٹمنٹ اور کار انداز پروگرام ایکویٹی کیپیٹل کے ساتھ فنڈ کیا جا رہا ہے۔ یہ ماڈل ایک وسیع مارکیٹ سٹڈی کے بعد ڈیزائن کیا گیا ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا ہمارا مشن ہے کہ پاکستان میں مقامی کرنسی کے کریڈٹ کے قابل انفراسٹرکچر پروجیکٹس کی فنانسنگ میں مارکیٹ کی ناکامیوں کو دور کرنا بھی ہے تاکہ ان خامیوں پر قابو پایا جا سکے۔مہیش مشرا نے کہا کہ جنوبی پنجاب میں معاشی سرگرمیوں کو تیز کرنے کے لیے بھی اقدامات عمل میں لائے جائیں گے۔اس حوالے سے ایوان تجارت و صنعت ملتان کے ساتھ رابطے میں ہیں۔ پاکستان میں لانگ ٹرم ایجنڈے کے تحت ریگولیٹری ماحول کو بہتر کرنا بھی مقصود ہے اس سے پاکستان میں روزگار کے مواقع جات پیدا ہوں گے۔ پاکستان کے ساتھ بارٹر ٹریڈ بڑھانے کے لیے بھی کام کر رہے ہیں۔ پاکستانی بزنس مینوں کو برطانیہ کی مارکیٹ تک رسائی دینے کے لیے معاونت فراہم کریں گے یہ پاکستانی بزنس مینوں کے لیے اچھا موقع ہے کہ وہ اپنے کاروبار کو وسعت دے سکیں۔ اس وقت بھی برطانیہ میں پاکستان کے مختلف برانڈز اپنا کاروبار کر رہے ہیں چاہتے ہیں کہ مزید کمپنیاں پاکستان سے برطانیہ آئیں۔ماحولیاتی تبدیلیوں کے حوالے سے پاکستان کو جن چیلنجز کا سامنا ہے اس پر "گرین فنانسنگ"پروگرام شروع کیا ہے جس کی مدد سے مسائل کا مقابلہ کرنے میں پاکستان کی معاونت کی جائے گی۔ کلائمیٹ انویسٹمنٹ پروگرام کے تحت 10 سال فنانسنگ فراہم کی جائے گی۔ اس طرح ری نیو ایبل انرجی پروگرام پر بھی کام جاری ہے پاکستان میں ماحول دوست مینوفیکچرنگ کے منصوبے پر بھی کام کیا جا رہا ہے جس سے ہنر بندوں کو بہتر مواقع جات حاصل ہوں گے۔ حالیہ دنوں میں پاکستان کی وفاقی اور صوبائی حکومتوں کو بڑے چیلنجز کا سامنا ہے جس کا مشاہدہ کر رہے ہیں اور اس میں بہتری کے لیے بھی کام کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کرونا کے حملوں نے یو کے سپلائی چین کو متاثر کیا تھا اب حالات معمول پر آرہے ہیں اور اس سپلائی چین کو بہتر کیا جا رہا ہے مقامی کاروباری برادری کو برطانیہ میں ایکسپورٹ کے حوالے سے جن مسائل کا سامنا ہے ان سے اگاہ کریں تاکہ ان رکاوٹوں کو دور کیا جا سکے۔