لاہور ہائیکورٹ کی باربار دھواں چھوڑنے والی فیکٹریوں کو 10،10لاکھ روپےجرمانے کی ہدایت

لاہور ہائیکورٹ کی باربار دھواں چھوڑنے والی فیکٹریوں کو 10،10لاکھ روپےجرمانے ...
لاہور ہائیکورٹ کی باربار دھواں چھوڑنے والی فیکٹریوں کو 10،10لاکھ روپےجرمانے کی ہدایت
کیپشن: فائل فوٹو

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) لاہور ہائیکورٹ نے دھواں چھوڑنے والی فیکٹریوں کو 10، 10 لاکھ روپے جرمانے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس شاہد کریم نے انسداد سموگ سے متعلق شہری فاروق ہارون و دیگر کی درخواستوں پر سماعت کی، ڈی جی ماحولیات سمیت دیگر افسران عدالت میں پیش ہوئے۔

دوران سماعت عدالت نے سیل ہونے والے فیکٹریوں کو ڈی سیل کے لیے جوڈیشل واٹر کمیشن سے رجوع کرنے کی ہدایت کردی۔

ڈی جی ماحولیات نے عدالت کو بتایا کہ محکمہ ماحولیات نے جو فیکٹریاں سیل کیں انڈسٹری مالکان نے ان کو خود سے ڈی سیل کردیا، خود سے انڈسٹریز والے ڈی سیل کرلیتے ہیں، محکمہ ماحولیات کے افسران سے حلف نامے لیے گئے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ جو افسر رولز کی خلاف ورزی کرے گا اس کے خلاف کارروائی ہوگی، محکمہ ماحولیات کے جن افسران کے نام عدالت نے دیئے ان کے خلاف کارروائی شروع ہوچکی ہے۔عدالت نے ڈی جی ماحولیات کی رپورٹ پر اطمینان کا اظہار کیا، عدالت عالیہ نے افتخار سٹیل ملز کو 10 لاکھ روپے جرمانہ کرنے کا حکم دیتے ہوئے مل کو بھی سیل کرنے کی ہدایت کردی۔

ممبر واٹر کمیشن نے عدالت کو آگاہ کیا کہ رات کو آلودہ دھواں چھوڑنے والی فیکٹریاں چلتی ہیں، محکمہ ماحولیات کے افسران رشوت لیتے ہیں، عدالت نے محکمہ ماحولیات کے افسران کو فوری وارننگ جاری کرنے کی ہدایت کردی۔

جسٹس شاہد کریم نے ڈی جی ماحولیات کو مخاطب کرتے ہوئے ریمارکس میں کہا کہ ڈی جی صاحب! افسران کو بتا دیں اگر کسی کے علاقے میں آلودہ دھواں چھوڑنے والی فیکٹری کام کررہی ہوئی تو ان کے خلاف کارروائی ہوگی۔

عدالت نے سرکاری وکیل سے استفسار کیا کہ مصنوعی بارش کا کیا بنا کب برسا رہے ہیں؟ جس پر سرکاری وکیل نے جواب دیا کہ پلاننگ وغیرہ جاری ہے،جسٹس شاہد کریم نے ریمارکس میں کہا کہ میں عوامی پیسہ خرچ کرنے کی اجازت نہیں دوں گا، آپ سموگ کے تدارک کے لیے اقدامات کرلیں وہی بہت ہیں۔

جسٹس شاہد کریم کا مزید کہنا تھا کہ اس شہر کو پتہ نہیں کیا بنانا چاہتے ہیں، سموگ کے سیزن میں ترقیاتی منصوبے جاری ہیں جس پر کمشنر لاہور کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ ہم نے رات کے وقت ترقیاتی منصوبوں پر کام کروانے کا نوٹیفکیشن جاری کررکھا ہے۔

بعدازاں عدالت نے سموگ کے تدارک کے لیے دائر درخواستوں پر مزید کارروائی 8 دسمبر تک ملتوی کردی۔ 

مزید :

تعلیم و صحت -