فائرنگ کے واقعے اور منظور پشتین کی گرفتاری پر پی ٹی ایم کا مؤقف سامنے آگیا

فائرنگ کے واقعے اور منظور پشتین کی گرفتاری پر پی ٹی ایم کا مؤقف سامنے آگیا
فائرنگ کے واقعے اور منظور پشتین کی گرفتاری پر پی ٹی ایم کا مؤقف سامنے آگیا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

کوئٹہ (ڈیلی پاکستان آن لائن)پشتون تحفظ موومنٹ کاکہنا ہے کہ منظور پشتین کو سرچ آپریشن کے دوران گرفتار نہیں کیا گیا بلکہ انہوں نے خود گرفتاری دی ہے۔ 

ترجمان پی ٹی ایم کی جانب سے جاری ہونیوالے بیان میں کہا گیا ہے کہ منظور پشتین چمن میں محنت کشوں کے دھرنے سے خطاب کرکے کوئٹہ جارہے تھے کہ چمن پریس کلب کے قریب ان کی گاڑی پر اندھا دھند فائرنگ کردی گئی اس دوران منظور پشتین کی گاڑی کو 8 گولیاں لگیں جبکہ ایک خاتون زخمی بھی ہوئی جو ہسپتال میں زیر علاج ہے ۔ منظور پشتین اپنے ساتھوں کو لیکر واپس چمن آئے اور خود سے گرفتاری پیش کی۔ 

خیال رہے کہ ڈپٹی کمشنر کی جانب سے دعویٰ کیا گیا ہے کہ باب چمن کےقریب لیویز ،پولیس اور ایف سی کی مشترکہ ٹیم معمول کی چیکنگ پر تھی کہ اس دوران منظور پشتین کا قافلہ وہاں سے گزرا، قافلے کو روکنے کی کوشش کی گئی تو قافلے میں شامل کچھ لوگوں نے اپنی گاڑیاں روکنے کے بجائے اہلکاروں پر چڑھا دیں اور اس دوران فائرنگ بھی کی۔ جواب میں اہلکاروں نے بھی منظور پشتین کی گاڑی کے ٹائر پر فائرنگ کی تاہم منظور پشتین اور ان کے ساتھی فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔ واقعے کے بعد سرچ آپریشن کرتے ہوئے منظور پشتین کو ایک گودام سے گرفتار کرلیا گیا ہے ۔واقعے کا مقدمہ منظور پشتین کے خلاف درج کرلیا گیا ہے ۔ 

مزید :

قومی -سیاست -