سرکاری سکولوں میں بچوں کی تعداد 11 ملین سے زائد ہو چکی ، مجتبیٰ شجاع

سرکاری سکولوں میں بچوں کی تعداد 11 ملین سے زائد ہو چکی ، مجتبیٰ شجاع

لاہور(کامرس رپورٹر)وزیرایکسائز وٹیکسیشن، خزانہ پنجاب مجتبیٰ شجاع الرحمن نے کہا ہے کہ چیف منسٹر ریفارمز روڈ میپ کے تحت سکولوں میں طلبا اور اساتذہ کی حاضری 92 فیصدجبکہ جاری سہولیات اور سکولوں کی انسپکشن 96 فیصد ماہانہ یقینی بنائی گئی ہے - قبل ازیں سکولوں میں طلباءو اساتذہ کی حاضری 60 فیصد اور موجود سہولیات اور انسپکشن کی شرح 62 فیصد کے قریب تھی ۔انہوں نے کہا کہ حکومت کے وضع کردہ روڈ میپ کے باعث سرکاری سکولوں میں بچوں کی تعداد 11 ملین سے زائد ہو چکی ہے جو کہ ایک ریکارڈ ہے - انہوںنے کہا کہ صوبائی حکومت طلبہ کو بامقصد،پروفیشنل اور معیاری تعلیم کے مواقع فراہم کررہی ہے جس کے نتیجے میں سرکاری سکولوں کا معیار تعلیم بہتر ہوا ہے۔پارٹی ورکرز اور مختلف وفود سے گفتگو کرتے ہوئے مجتبیٰ شجاع الرحمن نے کہا کہ وزیر اعلی کے روڈ میپ پروگرام کے تحت ہر سال سرکاری سکولوں کے اساتذہ گھر گھر جا کر سکول کے باہر بچوں کا سروے کرتے رہے اور انہیں سکولوں میں مفت تعلیم کے لئے لانے کا بندوبست کیا جس سے خاطر خواہ نتائج سامنے آئے ہیں -انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کے ٹھوس اقدامات کی وجہ سے نہ صرف سکولوں میں طلبا ءکی تعداد حقیقی معنوں میں 11 ملین سے تجاوز کر گئی ہے بلکہ میٹرک ، مڈل اور پانچویں کے سالانہ امتحانات میں سرکاری سکولوں کا نتیجہ مجموعی طور پر حوصلہ افزا حد تک بڑھ گیا ہے ۔ مجتبیٰ شجاع الرحمن نے کہا کہ ماڈل سکولوں کے قیام ،سرکاری سکولوں میں کمپیوٹر لیب شروع کرنے، 75 ہزار سے زائد میرٹ پر سائنس اساتذہ کی بھرتی ، دانش سکولوںکے قیام ،اربوں روپے کی لاگت سے سکولوں میں سہولیات کی فراہمی ، انڈوومنٹ فنڈ کا قیام جو 12 - ارب روپے تک پہنچ چکا ہے جیسے اقدامات کے باعث ہی سے سرکاری سکولوں میں انرولمنٹ کا عمل بڑھا ہے -انہوں نے کہا کہ 4سے15سال تک کی عمر کے 2لاکھ62ہزار500بچے غےر رسمی بنےادی تعلےم کے منصوبہ کے تحت تعلےم حاصل کررہے ہےں۔ اس کے علاوہ اےنٹوں کے بھٹوں ،جےلوں ودےگر مقامات پر بھی تعلےمی سرگرمےوں کے لےے اقدامات کےے جارہے ہےں۔

مزید : میٹروپولیٹن 4


loading...