تحریک انصاف اور جمعیت علماءاسلام نے ملکی مفادات پر سیاسی مفادات کو ترجیح دی ،عوامی رائے

تحریک انصاف اور جمعیت علماءاسلام نے ملکی مفادات پر سیاسی مفادات کو ترجیح دی ...

لاہور(انوسٹی گیشن سیل) تحریک انصاف اور جمعیت علماءاسلام نے ملکی مفادات پر سیاسی مفادات کو ترجیح دی ہے۔طالبان کو سیاسی اور دینی جماعتوں کی بجائے اپنے لوگوں کی کمیٹی سامنے لانے چاہیے۔ عمران خان اورمفتی کفایت اللہ کامذاکرات سے لا تعلقی کا فیصلہ درست ہے۔روز نامپ پاکستان کی طرف سے کئے گئے سروے میں شہریوں نے ملے جلے رد عمل کا اظہار کیا۔غلام علی اور محمد جہانگیر نے کہاکہ طالبان کا رویہ غیر سنجیدہ ہے لگتا ہے کالعدم تنظیم مذاکرات کے حق میں نہیں ہے۔طالبان نے سیاسی اور مذہبی لوگوں کی کمیٹی تشکیل دے کر قوم میں دراڑپیدا کر دی ہے۔حکومت اور اپوزیشن کو ایک دوسر ے پر کیچڑ اچھالنے کے مواقع فراہم کئے گئے ہیں ۔طالبان کو اپنے لوگوں کی ٹیم سامنے لانی چاہیے۔ذوالفقار علی اور محمد فہیم نے کہاکہ طالبان نے عمران خان،مولاناسمیع الحق،مفتی کفایت اللہ ،مولانا بعدالعزیز اور پروفیسر ابراہیم کو نامزد کر کے طالبان نے اعتماد کا اظہار کیا۔پانچوں ناموں کو سامنے آکر مذاکراتی ملک میں امن عمل کا حصہ بننا چاہیے۔عمران خان اورمفتی کفایت اللہ کو اپنا فیصلہ واپس لے کر مذاکراتی ٹیم کا رکن بننا چاہیے۔عظیم احمد اور فراز علی نے کہاکہ تحریک انصاف اور جمعیت علماءاسلام کا مذاکراتی ٹیم کا حصہ نہ بننے سے مذاکراتی عمل کو فرق نہیں پڑے گا۔طالبان کو وسیع النظری کا مظاہرہ کرتے ہوئے نئے ناموں کا سامنے لا کر جس میں ان کے اپنے لوگ بھی شامل ہوں مذاکرات کو کامیاب بنانا چاہیے۔

عوامی رائے

مزید : صفحہ آخر


loading...