اورنج ٹرین کی کھدائی کے دورا ن زچہ بچہ سنٹر کی چار دیواری گر گئی

اورنج ٹرین کی کھدائی کے دورا ن زچہ بچہ سنٹر کی چار دیواری گر گئی

لاہور (جنرل رپورٹر) اورنج ٹرین منصوبے کی کھدائی کے دوران زچہ بچہ سنٹر کھاڑک کی چاردیواری گر گئی جس کے باعث زچہ بچہ سنٹر میں موجود لاکھوں روپے مالیت کی مشینری ، آلات اور فرنیچر چوری ہونے کے امکانات پیدا ہو گئے ہیں ملازمین کا کہنا ہے کہ ای ڈی ہیلتھ اور ڈپٹی ڈسٹرکٹ ہیلتھ نشتر ٹاؤن نے دیوار تعمیر کرانے کی بجائے ملازمین سے چندہ جمع کر کے دیوار بنانے کا حکم جاری کیا ہے جبکہ ای ڈی ہیلتھ ڈاکٹر ذوالفقار علی چودھری کا کہنا ہے کہ انہوں نے ایسا کوئی حکم نہیں دیا اگر ڈپٹی ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر اقبال گجر نے ایسا کہا ہے تو یہ خلاف قانون ہے۔ بتایا گیا ہے کہ اورنج ٹرین کی زد میں آنے کے بعد زچہ و بچہ سنٹر کھاڑک کی مین دیوار گزشتہ 4 روز سے گرا دی گئی ہے جس کے باعث اب اس سنٹر میں کسی قسم کی سیکیورٹی کا کوئی انتظام نہیں بیرونی دیوار نہ ہونے کے باعث کھاڑک سنٹر کے اندر پڑے ہوئے آئی ایل آر اور اس میں موجود لاکھوں روپے مالیت کی ویکسین غیر محفوظ ہو گئی اس کے ساتھ ساتھ ڈلیوری روم اور اس کے اندر موجود سرکاری سامان اور ادویات کے ساتھ ساتھ لاکھوں روپے مالیت کا فرنیچر بھی ہے جو چوروں کے رحم و کرم پر ہے۔ موجودہ حالات میں ملکی سیکیورٹی حالات کے پیش نظر اس زچہ و بچہ سنٹر میں کسی بھی قسم کی تخریب کاری کے امکانات بھی موجود ہیں۔ مریضوں اور ان کے لواحقین جن میں حاملہ خواتین اور شیر خوار بچے شامل ہیں وہ ان حالات میں زچہ و بچہ سنٹر میں آنے سے خوفزدہ ہو چکے ہیں اور انہوں نے وزیر اعلیٰ سے سنٹر کی فوری دیوار بنوانے اور سیکیورٹی فراہم کرنے کا مطالبہ کردیاہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1