بھارتی حکومت کو جلد از جلد اعتماد سازی کے ٹھوس اقدامات کرنے ہونگے‘ محبوبہ مفتی

بھارتی حکومت کو جلد از جلد اعتماد سازی کے ٹھوس اقدامات کرنے ہونگے‘ محبوبہ ...

سری نگر(کے پی آئی) پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی پی ڈی پی صدر اور ممبر پارلیمنٹ محبوبہ مفتی نے کہاہے کہ ان کی پارٹی ریاست جموں وکشمیر میں حکومت چاہتی ہے لیکن وہ صرف اقتدار کے حصول کیلئے نہیں بلکہ اس اعتماد اور بھروسے کیلئے، جو لوگ ریاست کو درپیش اقتصادی ،سیاسی و انتظامی مسائل کے حل کی اہلیت کے حوالے سے اس پارٹی پر رکھتے ہیں ۔انہوں نے کہاکہ میں نے گورنر کو بتایا ہے کہ ہم ریاست میں ایسی حکومت سازی چاہتے ہیں جو موثر طور سے ریاست کو درپیش مسائل حل کرنے کیلئے آگے بڑھے اور اس کیلئے بھارتی حکومت کو جلد از جلد اعتماد سازی کے ٹھوس اقدامات کرنے ہونگے ۔

گورنر سے ملاقات کے فورا بعد میڈیا نمائندوں سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ریاست کو درپیش بیشتر سیاسی ،اقتصادی اور انتظامی معاملات پر موثر اعتماد سازی اقدامات کے ذریعے توجہ دینے کی ضرورت ہے ۔انہوں نے کہاکہ ان معاملات کوریاستی ومرکزی سطح پر پہلے ہی ایجنڈا آف الائنس میں شامل کیا گیا ہے اور اگر اس پر عمل درآمد ہو تو جموں وکشمیر میں درپیش سیاسی غیر یقنینیت،معیشی بے اختیاری ۔تعمیر وترقی کے فقدان ،بے ورزگاری اور نامکمل وعدوں کے حوالے سے ایک اہم پیش رفت ہوگی اور اسکے وسیع فوائد سامنے آئیں گے ۔محبوبہ مفتی نے کہاکہ بی جے پی یا وزیراعظم نریندر مودی ،جنہیں ملک میں زبردست عوامی نمائندگی حاصل ہے ،کے ساتھ حکومت سازی میں اشتراک کرکے پی ڈی پی نے کافی بڑا خطرہ مول لیا اور اندر و بیرون سطح پر زبردست چیلنج کا سامنا کرنا پڑا لیکن یہ مرحوم مفتی سعید کا ہی قد تھا کہ انہوں نے ان تمام مشکلات کا سامنا کرکے ریاست کی تعمیر وترقی اور امن وامان کے اپنے ایجنڈے کو جاری رکھا ۔انہوں نے کہاکہ اتنے بڑے خطرے کے باوجود بھارتی حکومت نے بدقسمتی سے اسکی طرف سنجیدگی کامظاہرہ نہیں کیا اور گذشتہ مہینوں کے دوران مرکزی حکومت اس طرح سے پیش نہیں آئی جیسا کہ مرحوم مفتی محمد سعید نے امید کی تھی۔محبوبہ مفتی نے کہاکہ مرحوم مفتی محمد سعید کا یہ تصور تھا کہ نریندر مودی اور ان کی جماعت کو ملک بھر میں ایک واضح اور بھرپور اکثریت ملی جس کی بنا پر وہ اس بات کے اہل ہیں کہ جموں وکشمیر کو درپیش سیاسی ،اقتصادی اور امن و امان کے مسائل کا موثر طور حل نکالا جاسکے گا اور اسکے لئے موجودہ مخلوط سرکار اہل ہے ۔مرحوم مفتی صاحب نہ صرف ریاست کے خطوں کو ملانے کے حق میں تھے بلکہ وہ چاہتے تھے کہ ریاست اور بیرون ریاست عوام کے درمیان اعتماد سازی بڑھے اور اس میں مرکزی حکومت اہم رول ادا کرسکتی تھی ۔انہوں نے کہاکہ اس وقت پی ڈی پی اور بی جے پی کا معاملہ نہیں ہے اس وقت اس حکومت سازی کا معاملہ ہے جو ریاست کو ان مشکلات سے نکال سکے۔پی ڈی پی صدر کا کہنا تھا کہ اگر ریاست میں حکومت سازی کی طرف پیش قدمی ہوتی ہے تو نئی حکومت کا یہ کام ہونا چاہئے کہ وہ ریاست کو 6دہائیوں سے درپیش سیاسی ،اقتصادی اور دیگر محاذوں پرمسائل سے نکالے اور یہاں دیر پااور مستحکم امن وامان قائم ہو ۔انہوں نے کہاکہ ہم لوگوں کا اعتماد بحال کرنا چاہتے ہیں اور اس کیلئے مرکز کو اعتماد سازی کے ٹھوس اقدامات کرنے ہونگے اور جب تک ایسا نہ ہو ،ہم آگے نہیں بڑھ سکتے ۔محبوبہ مفتی کے ہمراہ پی ڈی پی کے سینئر لیڈر اور ممبر پارلیمنٹ مظفر حسین بیگ بھی تھے ۔

مزید : عالمی منظر