کشمیر ی قوم کی قربانیاں رائیگاں نہیں جائیں گی ،اپنے حق کیلئے لڑنا دہشتگردی نہیں:حافظ سعید

کشمیر ی قوم کی قربانیاں رائیگاں نہیں جائیں گی ،اپنے حق کیلئے لڑنا دہشتگردی ...

لاہور(نمائندہ خصوصی)مذہبی،سیاسی و کشمیری جماعتوں کے قائدین اور رہنماؤں نے کہا ہے کہ مسئلہ کشمیر کا فیصلہ کشمیری قوم نے ہی کرنا ہے ، کشمیر کی آزادی کے لیے خون دینے سے بھی گریز نہیں کریں گے۔ ہم مذاکرات کے مخالف نہیں لیکن مذاکرات کشمیریوں کی مرضی کے مطابق ہونے چاہئیں۔کشمیر کی آزادی کے لئے پاکستان کا بچہ بچہ کٹ مرنے کے لئے تیار ہے۔ حکومت، فوج اور قوم کشمیر کے مسئلہ پر اتحاد و یکجہتی کا مظاہرہ کرتے ہوئے ایک ہوجائیں۔کشمیر کی جنگ مزید طویل ہوئی تو یہ انڈیا کے لئے خوفناک مسئلہ بن جائے گا۔کشمیر کی آزادی کا راستہ صرف اور صرف جہاد فی سبیل اللہ میں ہے۔ یوم یکجہتی کشمیر ہمیں تحریک آزادی کو مزید تیز کرنے کا ولولہ دلاتا ہے۔کشمیری قوم کی قربانیاں رائیگاں نہیں جائیں گی۔کشمیریوں کی تحریک کو دہشت گردی کہنا غلط ہے۔اپنے حق کے لئے لڑنا دہشت گردی نہیں۔ کشمیر کی آزادی اور پاکستان کی سلامتی و بقا کے لئے پاکستانی و کشمیری سیسہ پلائی دیوار کی طرح کھڑے ہیں۔ مودی کشمیریوں کا قاتل ہے۔کشمیر پیکج میں دھوکہ کے سوا کچھ نہیں۔حکومت پاکستان کی طرف سے کشمیرکی وکالت کمزور ہو سکتی ہے لیکن پاکستانی قوم دل وجان سے کشمیری قوم کے ساتھ ہے۔کشمیری پر عزم ہیں خون کے آخری قطرے تک تحریک جاری رہے گی۔ان خیالات کا اظہارامیر جماعۃ الدعوۃ پاکستان پروفیسر حافظ محمد سعید، جمعیت علماء اسلام کے مرکزی رہنما مولانا محمود الحسن اشرف، مسلم کانفرنس کے مرکزی رہنما و سابق وزیر دیوان علی چغتائی، جماعۃ الدعوۃ آزادکشمیر کے امیر مولانا عبدالعزیز علوی، تحریک انصاف کشمیر کے نائب صدر و سابق وزیر خواجہ فاروق، انجمن فقہ جعفریہ کے سرپرست مفتی کفایت حسین نقوی، پاسبان حریت آزاد جموں کشمیر کے چیئرمین عزیر غزالی، حزب المجاہدین کے نائب امیر شمشیر خان، پیپلز پارٹی آزاد جموں کشمیر کے رہنما شوکت میر، جماعۃ الدعوۃ کے مرکزی رہنما مولاناسیف اللہ خالد، قاری محمد یعقوب شیخ، جماعۃ الدعوۃ آزاد کشمیر کے رہنما قاری مقبول احمد، جماعت اسلامی مظفر آباد کے رہنما قاضی شاہد حمید، مرکزی جمعیت اہلحدیث کے رہنما مولانا عصمت اللہ، انٹرنیشنل فورم فار جسٹس جموں کشمیر کے چیئرمین مشتاق الاسلام، تحریک المجاہدین کے نائب امیر عبدالشکور آزاد، مہاجرین کشمیرکے رہنما یوسف بٹ اور دیگر نے مرکزی ایوان صحافت مظفر آباد میں یکجہتی کشمیر کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ کانفرنس میں علماء، وکلاء، طلباء، مہاجرین سمیت مختلف مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے افراد نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔کانفرنس سے قبل پریس کلب کے باہر سکولز کے طلبا ء کی جانب سے کشمیریوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لئے ہاتھوں کی زنجیر بنائی گئی تھی۔ حافظ محمد سعید کے پنڈال میں پہنچنے پر انکا شاندار استقبال کیا گیا۔شرکاء کی جانب سے حافظ محمد سعید سے رشتہ کیا، لاالہ الااللہ،کشمیریوں سے رشتہ کیا لاالہ الااللہ کے نعرے لگائے گئے۔ جماعۃالدعوۃ کے سربراہ حافظ محمد سعید نے کہا کہ جماعت الدعوۃیکجہتی کشمیر مہم کا آغاز مظفرآباد سے کررہی ہے۔ مظفرآباد تحریک آزادی کشمیر کا بیس کیمپ ہے۔ سب سے بڑی یکجہتی یہ ہے کہ اللہ کے مخلص بندوں نے اس تحریک کو اپنے خون، صلاحیتوں اور ہر طریقے سے جاری رکھا ہوا ہے۔ مقبوضہ کشمیر سے سیدعلی گیلانی ،آسیہ اندارابی، یسین ملک میر واعظ سمیت سب کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں خصوصاً مسرت عالم اوڈاکٹر قاسم فکتو جو طویل عرصہ سے قیدو بند کی صعوبتیں برداشت کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کشمیر کے سودے کا سوال پیدا نہیں ہوتا۔ جو مفاد پرست یہ کام کرنے کی کوشش کریں گے ان کا نام و نشان نہیں رہے گا۔ انہوں نے کہا کہ مفتی محمد سعید اور مجاہد قاسم کا جنازہ ریفرنڈم تھا ۔ شہید قاسم کے جنازے میں ہزاروں کشمیری تھے جبکہ مفتی سعید کے جنازے میں چند لوگوں نے شرکت کی۔ مودی کشمیریوں کا قاتل ہے کشمیری اس کے پیکج پر دھوکہ نہ کھائیں۔کشمیری حکومت میں موجود رہنماؤں سے کہتا ہوں کہ مودی کشمیر میں کالونیوں کے نام پر فوجی چھاؤنیاں بنارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کہا جاتا ہے مہاراجہ ہری سنگھ نے کشمیر کا سودا کیا میرے پاس ثبوت موجود ہے ایسا کبھی نہیں ہوا بھارت سرکار دھوکے باز اور تاریخی فراڈ کرنے والی ہے۔انہوں نے کہا کہ مودی کا استقبال کرنے والوں اور بھارت سے مفاد رکھنے والوں سے پوچھتاہوں کہ 3 دن میں جموں کے 5 لاکھ شہری شہید کئے گئے کیا یہ آپ کی تاریخ نہیں؟مہاجرین نے کشمیر سے ہجرت کیوں کی. ابھی تک خیموں میں رہ رہے ہیں مگر یاد رکھواللہ قربانیوں کو کبھی ضایع نہیں کرتا۔ انہوں نے کہا کہ متحدہ جہا کونسل کے سربراہ سید صلاح الدین نے پٹھان کوٹ کی ذمہ داری قبول کرکے پاکستان کو مشکل سے نکالا ہے۔جمعیت علماء اسلام آزاد کشمیر کے رہنما مولانا محمود الحسن نے کہا کہ مسئلہ کشمیر عالمی سازشوں کا شاخسانہ ہے،1947سے لے کر آج تک یہ مسئلہ پاکستان ،کشمیر ی عوام اور جنوبی ایشیا کے امن کے لئے ایک چلینج بن چکا ہے۔انہوں نے کہا کہ دہشت گردی کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں اور جہاد اسلامی فریضہ ہے۔کشمیریوں کو آزادی جہاد سے ہی ملے گی ۔مسلم کانفرنس کے رہنما و سابق وزیر دیوان چغتائی نے کہا کہ کشمیر بنے گا پاکستان کی حمایت کے لئے جماعۃ الدعوۃ کے مظفر آباد میں پروگرام پر انہیں خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔یہ تحریک آزادی کشمیر کا بیس کیمپ ہے۔اس کو مضبوط کرنا ہو گا ۔آج کا پروگرام تحریک آزادی کشمیر کی مضبوطی کی علامت ہے۔پاکستانی و کشمیری عوام ایک ساتھ اور تحریک آزادی کے لئے متحد ہیں۔جماعۃ الدعوۃ آزادکشمیر کے امیر مولانا عبدالعزیز علوی نے کہا کہ مشکل حالات اور پابندیوں کے باوجو د حافظ محمد سعید کشمیریوں کے ساتھ کھڑے ہیں اور آزادی کے لئے فکر مند ہیں۔حکومت پاکستان کی طرف سے کشمیرکی وکالت کمزور ہو سکتی ہے لیکن پاکستانی قوم اپنے خون سے وکالت کر رہی ہے۔کشمیری پر عزم ہیں خون کے آخری قطرے تک تحریک جاری رہے گی۔تحریک انصاف کے رہنما و سابق وزیر خواجہ فاروق حامد نے کہا کہ حکومتوں کے اپنے مفادات ہو سکتے ہیں لیکن پاکستانی عوام نے کشمیر کے حوالہ سے اپنی ترجیحات کو تبدیل نہیں کیا،۔پاکستانی قوم آزادی کی تحریک میں کشمیریوں کے شانہ بشانہ کھڑی ہے۔اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق کشمیریوں کو انکا حق ملنا چاہئے۔سوڈان اور تیمور میں بھی ریفرنڈم ہوا تھا۔کشمیریوں کو حق کیوں نہیں دیا جاتا۔انجمن فقہ جعفریہ کے سرپرست مفتی کفایت حسین نقوی نے کہا کہ امریکہ کہتا ہے کہ حافظ سعید ہمیں دے دو،میں اعلان کرتا ہوں کہ ہم حافظ محمد سعید کا استعمال شدہ جوتا بھی امریکہ کو دینے کے لئے تیار نہیں۔پاسبان حریت آزاد جموں کشمیر کے چیئرمین عزیز غزالی، حزب المجاہدین کے نائب امیر شمشیر خان ،پیپلز پارٹی آزاد جموں کشمیر کے رہنما شوکت جاوید میر، جماعۃ الدعوۃ کے مرکزی رہنمامولانا سیف اللہ خالد، قاری محمد یعقوب شیخ، جماعۃ الدعوۃ آزاد کشمیر کے رہنماقاری مقبول احمد،جماعت اسلامی مظفر آباد کے رہنما قاضی شاہد حمید، مرکزی جمعیت اہلحدیث کے رہنما مولانا عصمت اللہ ، انٹرنیشنل فورم فار جسٹس جموں کشمیر کے چیئرمین مشتاق الاسلام، تحریک المجاہدین کے نائب امیر عبدالشکور آزاد ، مہاجرین کشمیرکے رہنما یوسف بٹ ودیگر نے کہاکہ مسئلہ کشمیر کے حوالہ سے دنیا میں بھارتی سیاستدان و میڈیا غلط پروپیگنڈہ کر رہے ہیں اور آزادی کی تحریک کو دہشت گردی کا نام دے رہے ہیں

مزید : صفحہ اول