بار میں ناخوشگوار واقعات عوام کا اعتماد متزلزل کرتے ہیں، سد باب ضروری ہے: چیف جسٹس اعجازلاحسن

بار میں ناخوشگوار واقعات عوام کا اعتماد متزلزل کرتے ہیں، سد باب ضروری ہے: چیف ...

لاہور(نامہ نگار خصوصی )چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ مسٹر جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا ہے کہ انصاف کی فراہمی کی منزل حاصل کرنے کیلئے ضروری ہے کہ بنچ اور بار ہم قدم ہو جائیں ۔ اس لئے ایک خود مختیار عدلیہ کیلئے بار کا ہونا انتہائی ضروری ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ بار اور بنچ کے درمیان مصنوعی خلیج بھی سائلین کیلئے عذاب کا باعث بن سکتی ہے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ وکلاء کیلئے خصوصی ویب سائیٹ پر کام جاری ہے اور انہیں جلد خوشخبری دی جائے گی جبکہ ہائی کورٹ بنچ ملتان میں لفٹ کی تنصیب ، ڈسپنسری کی اپ گریڈیشن اور گاڑیوں کی پارکنگ کی جگہ کے حصول کیلئے کوشش کی جائے گی۔وہ گزشتہ روز ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن ملتان کے سالانہ عشائیہ کے موقع پر بطور مہمان خصوصی خطاب کررہے تھے۔ مسٹر جسٹس محمد قاسم خان دیگر جسٹس صاحبان ،صدر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن ملتان سیدمحمد علی گیلانی ، سیکرٹری جنرل مالک خان لنگاہ کے علاوہ جنوبی پنجاب سے تعلق رکھنے والے ہائیکورٹ کے وکلاء کی ایک بہت بڑی تعداد اس موقع پر موجود تھی۔چیف جسٹس نے کہا کہ بار میں بعض اوقات ناخوشگوار واقعات بھی پیش آتے ہیں جو کہ عوام کے اعتماد کو متزلزل کر دیتے ہیں۔ ایسے نا خوش گوار واقعات کا مکمل سدِباب بہت ضروری ہے ۔ انہوں نے اعداد و شمار بیان کرتے ہوئے کہا کہ سنجیدہ نوعیت کے کیسز 20 فیصد وکلاء کے پاس چلے جاتے ہیں اور شاید مقدمات کی اس غیر مساویانہ تقسیم سے فرسٹریشن بڑھتی ہے اور بار میں ناخوشگوار واقعات جنم لیتے ہیں۔چیف جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ جنوبی پنجاب کے مسائل بڑے ہیں لیکن یہاں کی عوام کے دل بھی بڑے ہیں۔ لوگوں کے مسائل کے حل میں ہائی کورٹ ملتان بنچ کے بہترین کردار ادا کر رہا ہے اور وہ سمجھتے ہیں کہ اس بنچ میں ججز اور سٹاف کی کمی ہے اس لئے زیر التواء مقدمات نمٹانے کیلئے ڈویژن بنچ بڑھائے جائیں گے۔صدر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن ملتان سید محمد علی گیلانی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ عدلیہ میں ججز ایڈہاک کی بجائے مستقل بنیادوں پر لگائے جائیں، ہائی کورٹ ملتان بنچ میں ججز اور سٹاف کی تعداد میں اضافہ کیا جائے، سول ججز اور ایڈیشنل سیشن ججز کے امتحانات کیلئے ملتان میں امتحانی مرکز قائم کیا جائے، ججز کی تربیت کیلئے ملتان میں جوڈیشل اکیڈمی قائم کی جائے، کسٹم ، انکم ٹیکس کے کیسز کیلئے ملتان میں مستقل بنچ قائم کیا جائے۔ سروسز، کسٹمر انشورنس کے ٹریبونلز بھی ملتان میں قائم کئے جائیں۔اس موقع پر چیف جسٹس نے ہائیکورٹ بنچ ملتان کے جسٹس صاحبان اور وکلاء میں شیلڈز بھی تقسیم کیں۔ سینئر وکیل چوہدری محمد ریاض جہانیہ کو بہترین کارکردگی پر شیلڈ دی گئی۔

مزید : صفحہ آخر