بلدیاتی نظام کی بدولت عوام کے مسائل تیزی سے حل ہوں گے ،

بلدیاتی نظام کی بدولت عوام کے مسائل تیزی سے حل ہوں گے ،

پشاور( پاکستان نیوز)چیف کمشنر رائٹ ٹو سروسز کمیشن عظمت حنیف اورکزئی نے کہا ہے کہ عنقریب بلدیاتی نظام کی بدولت صوبے کے عوام کے مسائل تیزی سے حل ہوں گے اور ہمارا معاشرہ مقامی سطح پر ترقیاتی ممالک کی سہولیات سے روشناس ہوگا ۔ انہوں نے منتخب نمائندوں پر زور دیا کہ وہ رائٹ ٹو سروسز ایکٹ سمیت موجودہ حکومت کی انسانی حقوق سے متعلق قانون سازی سے آگاہی حاصل کریں اور ان قوانین کے ثمرات کو اپنے حلقوں کے عوام تک پہنچائیں۔ انہوں نے انکشاف کیا کہ رائٹ ٹو سروسز کا قانون دنیا کے تقریباً سو ممالک میں نافذ ہے جن میں مبصرین نے خیبر پختونخوا کے رائٹ ٹو سروسز قانون کو بہترین قرار دیا ہے۔، وہ بدھ کے روز سوات پریس کلب میں ضلع ، تحصیل ، نیبر ہوڈ اور ویلج کونسل کے منتخب ممبران اور عہدیداروں کی اگاہی کیلئے منعقدہ سیمینار سے خطاب کررہے تھے ۔اس موقع پر ڈپٹی کمشنر سوات محمود اسلم وزیر ، ڈسٹرکٹ نائب ناظم عبدالجبار خان اور تحصیل ناظم بابوزئی اکرام خان کے علاوہ سول سوسائٹی اور عوام کی بڑی تعداد بھی موجود تھی۔ چیف کمشنر نے کہا کہ رائٹ ٹو سروسز ایکٹ میں پندرہ محکموں سے متعلق شکایات کا ازالہ کیا جاتا ہے جسکا مقصد عوام کی حقیقی خدمت کے لئے بہتر طرز حکمرانی کے تقاضو ں کو پوا کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ گڈ گورننس کا بنیادی تقاضا یہ ہوتا ہے کہ عوام کو بنیادی سہولیات بلا رکاوٹ کم سے کم وقت میں فراہم کیے جائیں اور نظام حکومت میں شفافیت ہواور اس سے کرپٹ پریکٹیسیز کا خاتمہ کیا جائے۔ عظمت حنیف اورکزئی نے کہا کہ اس ایکٹ کے تحت صوبہ کے ہر ضلع میں ایک ڈسٹرکٹ مانیٹرنگ آفیسر مقرر کیا گیا ہے جو ہر پندرہ روز بعد صوبائی ہیڈ کوارٹر کو ضلعی دفتر کی کارکردگی پر مبنی رپورٹ بھیجتا ہے ۔ انہوں نے منتخب نمائندوں پر زور دیا کہ وہ اس ایکٹ کے علاوہ رائٹ ٹو انفارمیشن ایکٹ ، لوکل گورنمنٹ ایکٹ اور دیگر بنیادی حقوق سے متعلق قوانین سے اگاہی حاصل کرکے اپنے حلقوں میں ان کی افادیت سے عوام کی آگاہ کریں اور عوام کی نمائندگی کرکے ضلعی محکموں میں ان کے مسائل حل کرنے میں مدد دیں ۔ اس موقع حاضرین نے ایکٹ سے متعلق مفید سوالات بھی کئے۔ سیمینار سے ضلع نائب ناظم سوات عبدالجبار خان ، ڈپٹی کمشنر محمود اسلم وزیر ، ریاض داؤد زئی اور دیگر نے بھی خطاب کیا ۔ یاد رہے کہ رائٹ ٹو سروسز ایکٹ سے عوام کو آگاہی دینے کیلئے صوبے کے دیگر اضلاع میں بھی اس طرح کے سیمینارز منعقد کئے جائیں گے ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر