وزیر داخلہ ہوں ٹائپسٹ نہیں،سندھ اسمبلی میں سہیل انور سیال خواتین اراکین کو وضاحت دینے میں ناکام

وزیر داخلہ ہوں ٹائپسٹ نہیں،سندھ اسمبلی میں سہیل انور سیال خواتین اراکین کو ...
وزیر داخلہ ہوں ٹائپسٹ نہیں،سندھ اسمبلی میں سہیل انور سیال خواتین اراکین کو وضاحت دینے میں ناکام

  

کراچی ( مانیٹرنگ ڈیسک) سندھ اسمبلی میں صوبائی وزیر داخلہ سہیل انور سیال کے لےے اس وقت مشکل صورت حال پیدا ہو گئی ، جب ایم کیو ایم کی خاتون رکن ہیراسماعیل سوہو نے ایک سوال کے تحریری جواب کا حوالہ دیا اور کہا کہ یہ کیسے ممکن ہے کہ جولائی سے دسمبر 2012 تک 6 مہینوں میں 66 گاڑیاں چھینی گئی ہوں اور 104 گاڑیاں بازیاب ہوئی ہوں ۔اس پر وزیر داخلہ کوئی تسلی بخش جواب نہیں دے سکے ۔

نجی ٹی وی کے مطابق سہیل انور سیال نے کہا کہ میں وزیر داخلہ ہوں ، میرا کام امن وامان کنٹرول کرنا ہے  ٹائپنگ کرنا نہیں  ٹائپنگ کی غلطی کو درست کیا جائے گا ۔ انہوں نے بعد میں وضاحت کی کہ اس مدت سے پہلے والی گاڑیاں بھی برآمد کی گئی ہوں ۔ زیادہ تر ضمنی سوالوں پر وزیر داخلہ نے یہی جواب دیا کہ یہ ” نیا سوال “ ( Fresh Question ) ہے ۔ اپوزیشن ارکان خود ہی ضمنی سوال کرتے اور خود ہی کہہ دیتے کہ یہ نیا سوال ہے ۔ جب وزیر داخلہ یہ کہتے کہ یہ نیا سوال ہے تو ایوان میں قہقہہ بلند ہوتا ۔حرا اسماعیل سوہو نے ایک اور غلطی کی بھی نشاندہی کی ۔ مسلم لیگ (فنکشنل) کی خاتون رکن نصرت سحر عباسی نے بار بار چیخ کر کہا کہ وزیر داخلہ خود جواب نہیں دے پا رہے ، انہیں گیلریز سے پرچیاں مل رہی ہیں ، وہ پرچیوں پر چل رہے ہیں ۔

مزید : کراچی