ہسپتال میں بیڈ کے ساتھ ہتھکڑی نہ کھل سکی، بیمار ملزم دم توڑ گیا

ہسپتال میں بیڈ کے ساتھ ہتھکڑی نہ کھل سکی، بیمار ملزم دم توڑ گیا
 ہسپتال میں بیڈ کے ساتھ ہتھکڑی نہ کھل سکی، بیمار ملزم دم توڑ گیا

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

چکوال (این این آئی) ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ہسپتال چکوال میں سب چکوال جیل کا سپاہی 80 سالہ بزرگ بیمار ملزم کو بیڈ کے ساتھ ہتھکڑی لگا کر غائب ہوگیا، اس دوران بزرگ کی حالت غیر ہوئی اور ڈاکٹر نے ملزم کو آئی سی یو منتقل کرنے کا کہا مگر چونکہ سپاہی غائب تھا، بزرگ ہتھکڑی لگے بیڈ پر ہی دم توڑگیا۔

تفصیلات کے مطابق قصبہ جوا مائر کے محمد عثمان نے بتایا کہ بزرگ محمد منیر ولد بوٹا کو صدرپولیس چکوال نے بچے کیساتھ زیادتی کے جرم میں گرفتار کر رکھا تھا اور بزرگ ملزم گزشتہ آٹھ ماہ سے سب جیل چکوال میں بند تھا اور آٹھ ماہ گزرنے کے باوجود ڈی این اے رپورٹ نہیں مل سکی۔ محمد عثمان نے بتایا کہ ہفتے کے روز ہم نے سپرنٹنڈنٹ سب جیل چکوال کو بتایا کہ محمد منیر کی حالت تشویشناک ہے لہٰذا انہیں ہسپتال منتقل کیا جائے. جیلر نے یقین دلایا کہ منیر کو آج منتقل کر دیا جائے گا.

ہفتے کی سہ پہر کو سپاہی رضا محمد منیر کولیکر ہسپتال آیا، ڈاکٹر نے ابتدائی طبی امداد دی اور اس دوران  سپاہی اپنے کام کے سلسلے میں بزرگ کو ہتھکڑی لگا کر بیڈ کے ساتھ باندھ کر  چلا گیا. محمد منیر کی حالت غیر ہوئی تو ڈاکٹر نے اسے فوری طور پر آئی سی یو میں منتقل کرنے کا کہا مگر چونکہ بیڈ پر ہتھکڑی اور تالا لگا تھا اور سپاہی غائب تھا اور دیکھتے ہی دیکھتے بزرگ نے ہتھکڑی لگے بیڈ پر جان دیدی.

محمد منیر کے لواحقین سراپا احتجاج بن گئے اور انہوں نے سپرنٹنڈنٹ جیل اور ڈی پی او چکوال سے مطالبہ کیا ہے کہ غفلت اور لاپرواہی برتنے والے سب جیل چکوال کے سپاہی کیخلا ف سخت کارروائی کی جائے.

مزید : علاقائی /پنجاب /چکوال /جرم و انصاف