پاکستان کو ڈیجیٹلائز کرنے کیلئے ایمرجنسی نافذکی جا سکتی ہے،مقبول صدیقی

پاکستان کو ڈیجیٹلائز کرنے کیلئے ایمرجنسی نافذکی جا سکتی ہے،مقبول صدیقی

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر)وفاقی وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی و ٹیلی کام ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے کہا ہے پاکستان کو ڈیجیٹلائز کرنے کیلئے ملک بھر میں ٹیلی کام اور آئی ٹی کے حوالہ سے ایمرجنسی نافذ کرنے پر غور کیا جا رہا ہے، اسلام آباد میں آئی ٹی پارک کے قیام کیلئے کام کا آغاز اپریل 2019ء تک شروع ہو جائیگا، ملک میں فائیو جی ٹیکنالوجی کیلئے وزیراعظم عمران خان نے خصوصی کمیٹی بنا دی ہے، سی پیک جیسے منصو بے سے پاک چین تعلقات مضبوط ہوں گے، ٹیلی کام کے شعبہ میں چینی سرمایہ کاری سے آئی ٹی اور ٹیلی کام میں انقلاب آئے گا، ہر سال پاکستان میں ٹیلی کام کے شعبہ میں 10 کروڑ ڈالر کے برابر غیر ملکی سرمایہ کاری ہو رہی ہے، موبائل فون کمپنیوں کے لائسنسوں کی تجدید کیلئے پالیسی پر کام جاری ہے ۔ اتوار کو میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے وفاقی وزیر نے کہا ملک کی ترقی میں آئی ٹی ٹیلی کام کا کردار نمایاں ہے، ملک کو آئندہ چار سال میں ڈیجیٹلائزیشن کیلئے قوم کو تیار نہ کیا گیا تو پاکستان ہر میدان میں دنیا کی دوڑ میں پیچھے رہ جائیگا۔ اس مقصد کو حاصل کرنے کیلئے ملک بھر میں عوام خصوصاً نوجوانوں کو آئی ٹی کی تربیت کے جدید کورسز کرانے کی حکمت عملی تیار کی گئی ہے۔ وزارت آئی ٹی نوجو ا نوں کیلئے ایسے کورسز ڈیزائن کرائے گی جن کے ذریعے انہیں تربیت یافتہ بنایا جائے گا، ان کیلئے خصوصی کورسز کو تعلیمی نصاب کا حصہ بنایا جائیگا۔ ہماری خواہش ہو گی کہ تمام موبائل فون آپریٹرز کو فائیو جی کا لائسنس دیا جائے، تمام کمپنیاں اس کی نیلامی میں حصہ لیں، مقابلہ کے رجحان میں تمام کمپنیاں آئیں گی تو کام کرنے کا مزہ آئے گا۔ اسلام آباد میں آئی ٹی پارک کے قیام کیلئے تیزی سے کام جاری ہے، اپریل تک منصوبہ کا آغاز ہو جائے گا، کراچی، لاہور اور ملک کے دوسرے شہروں میں آئی ٹی پارک قائم کرنے کی ضرورت ہے، پاکستان کو ڈیجیٹل کرنے کا خواب پورا کرنے کیلئے ملک میں آئی فون کے فروغ اور تیز ترین براڈ بینڈ کی سہولیات فراہم کرنے ضرورت ہے۔ براڈ بینڈ اور موبائل فون کے فروغ کیلئے ملک میں آپٹک فائبر بچھانا ایک بڑا چیلنج ہے، ملک میں موبائل فون تیار کرنے والی کمپنیوں کو ٹیکسوں میں چھوٹ دیں گے۔ طلباء و طالبات کو آئی ٹی ٹیلی کام کورسز کرانے کیلئے ورچوئل یونیورسٹی کے ذریعے مہارت فراہم کرنے کا کام لیا جائیگا۔ آئی ٹی اینڈ ٹیلی کام کی تعلیم کا آغاز سکول کی سطح سے کیا جائے گا اور کورسز کو باقاعدہ نصاب کا حصہ بنایا جائے گا۔

مزید : صفحہ آخر