چینی پولیس نے دودھ کے شرمناک کاروبار میں ملوث گروہ پکڑ لیا

چینی پولیس نے دودھ کے شرمناک کاروبار میں ملوث گروہ پکڑ لیا
چینی پولیس نے دودھ کے شرمناک کاروبار میں ملوث گروہ پکڑ لیا

  



بیجنگ (نیوز ڈیسک) چین میں کچھ جسم فروش خواتین گاہکوں کو زیادہ صحت بخش اور خوش ذائقہ سروس فراہم کرنے کے نام پر جنسی خدمات کے ساتھ بریسٹ فیڈنگ کی سہولت بھی فراہم کر رہی تھیں جس پر قانون نافذ کرنے والے ادارے حرکت میں آئے بنا نہ رہ سکے۔

وہ شہر جس کی پولیس ڈرائیورو ں کو روک کر جرمانہ کر نے کی بجائے انعام دیتی رہی جاننے کیلئے کلک کریں

پولیس کو اطلاع ملی تھی کہ جسم فروشی کا کاروبار کرنے والے گینگ مخصوص ویب سائٹوں کے ذریعے ایسی خواتین پیش کر رہے ہیں جو جسم فروشی کے علاوہ بریسٹ فیڈنگ کی سہولت بھی فراہم کرتی ہیں اور یہ ویب سائٹیں دعویٰ کر رہی تھیں کہ ان کی پیشکش روائتی جسم فروشی کے برعکس پرلطف ہونے کے ساتھ ساتھ گاہکوں کی صحت کی ضامن بھی ہے۔ جب بیجنگ، ہوبے اور جیانگسی صوبوں کی پولیس نے مل کر آپریشن کیا تو معلوم ہوا کہ دو بڑے گینگ مل کر یہ کاروبار چلا رہے تھے اور درجنوں کی تعداد میں ایسی خواتین خدمات فراہم کر رہی تھیں جو اپنے بچوں کو دودھ پلانے کے مرحلے میں تھیں لیکن بدقسمتی سے وہ اپنی اولاد کیلئے وقف نعمت کا کچھ اور استعمال کر رہی تھیں۔

ایک ویب سائٹ 40,000 یوان (تقریباً ساڑھے چھ لاکھ پاکستانی روپے) ماہانہ کے بدلے یہ پیشکش کرتی تھی جبکہ دوسری پر محض چند سو یوان کے بدلے اس قسم کی خواتین کی معلومات لی جا سکتی تھیں اور ان کی تصاویر دیکھی جا سکتی تھیں۔ پولیس نے متعدد گرفتاریاں کر لی ہیں جبکہ سینکڑوں گاہکوں کا بھی سراغ لگایا جا رہا ہے تاکہ انہیں ان کے شیطانی شوق کی سزا دی جا سکے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس