نواز شریف ، مریم اور صفد ر سخت سکیورٹی میں احتساب عدالت میں پیش

نواز شریف ، مریم اور صفد ر سخت سکیورٹی میں احتساب عدالت میں پیش

اسلام آباد (آئی این پی) احتساب عدالت نے سابق وزیراعظم نواز شریف ،مریم نواز اور کیپٹن (ر) صفدر کیخلاف نیب ریفرنسز میں استغاثہ کے مزید تین گواہوں کے بیانات قلمبند کرلئے ۔سابق وزیراعظم کے وکیل خواجہ حارث ایڈووکیٹ نے گواہوں پر جرح کی۔ ایک گواہ محمد تسلیم نے کمرہ عدالت سے نکلتے وقت سابق وزیراعظم سے مصافحہ بھی کیا۔عدالت نے تینوں ریفرنسز کی سماعت 9جنوری تک ملتوی کرتے ہوئے استغاثہ کے مزید 6گواہوں کو طلب کرلیا۔ بدھ کو اسلام آباد کی احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے تین نیب ریفرنسز کی سماعت کی۔نوازشریف انکی صاحبزادی مریم نواز اور داماد کیپٹن ریٹائرڈ صفدر عدالت میں پیش ہوئے۔ کمرہ عدالت میں نواز شریف مریم صفدر اور سینیٹر راجہ ظفر الحق کے ساتھ اگلی نشست پر جبکہ کیپٹن صفدر پچھلی نشست پر بیٹھے رہے۔نواز شریف مسلسل آصف کرمانی کے ساتھ سرگوشیوں میں مصروف رہے۔ پرویز رشید اور آصف کرمانی کئی بار سابق وزیراعظم کے پاس آئے اور ان سے بات چیت کی۔ دانیال عزیز اور طلال چوہدری نے بھی نواز شریف کے پاس آکر ان سے بات چیت کی جبکہ وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب کو بھی سابق وزیراعظم نے کئی بار اپنے پاس بلایا اور ان سے مشاورت کرتے رہے۔ استغاثہ کے گواہ محمد تسلیم نے اپنے بیان میں کہا کہ کمشنران لینڈ ریونیو فضہ بتول کے کہنے پروہ نیب راولپنڈی میں پیش ہوئے۔جہانگیراحمد نے نیب کے تفتیشی افسر کونواز شریف اور انکے بیٹوں حسن اور حسین نواز کاویلتھ ٹیکس ریکارڈ اور فضہ بتول کا تصدیق شدہ ریکارڈ جمع کرایا۔ خواجہ حارث کی جرح پر گواہ نے بتایا کہ فضا بتول نے میرے سامنے ریکارڈ کی تصدیق نہیں کی۔ گواہ تسلیم خان نے جاتے ہوئے نواز شریف سے ہاتھ بھی ملایا۔ ایون فیلڈ ریفرنس میں استغاثہ کے گواہ اسسٹنٹ ڈائریکٹر نیب زاور منظورکا بیان ریکارڈ کیا گیا۔ جنہوں نے عدالت کو بتایا کہ وہ 6ستمبر2017کو تفتیشی افسر کے سامنے پیش ہوئے۔سدرہ منصورنے پیش ہو کرحدیبیہ پیپرزمل کا سالانہ آڈٹ ریکارڈ تفتیشی افسرکو فراہم کیا۔میں نے بطور گواہ ریکارڈ پردستخط کئے۔ چار صفحات پرمشتمل لندن کوئین بنچ کا حکم نامہ اور کلرک محمد رشید نے 11صفحات پر مشتمل دستاویزات جمع کرائیں۔گواہان کے بیانات کے بعد عدالت نے تینوں ریفرنسز کی سماعت9 جنوری تک ملتوی کرتے ہوئے استغاثہ کے مزید چھ گواہوں کو طلب کرلیا ہے۔

احتساب عدالت

اسلام آباد (آئی این پی) سابق وزیراعظم نواز شریف اپنی صاحبزادی مریم نواز کے ہمراہ پنجاب ہاؤس سے احتساب عدالت پیشی کے لئے سخت سکیورٹی میں روانہ ہوئے تاہم کیپٹن (ر) صفدر الگ گاڑی میں سوار ہو کر عدالت پہنچے۔ نواز شریف کے استقبال کے لئے لیگی کارکنان احتساب عدالت کے باہر موجود تھے جبکہ احاطہ عدالت میں لیگی رہنماؤں کی بڑی تعداد موجود تھی جنہوں نے نواز شریف کا استقبال کیا اور ان کے ساتھ کمرہ عدالت پہنچے۔ نواز شریف کی عدالت پیشی کے موقع پر جوڈیشل کمپلیکس کی سکیورٹی انتہائی سخت کی گئی تھی عام افراد کا داخلہ بند تھا۔ عدالت کی طرف آنے جانے والے راستے خار دار تار لگا کر بند کئے گئے تھے۔ پولیس کی اعانت کے لئے ایف سی کے دستے تعینات کئے گئے تھے۔

سخت سکیورٹی

مزید : صفحہ اول