سپریم کورٹ نے جج ،پراسیکیوٹر جنرل نیب کی تعیناتی نہ ہونے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب کر لیا

سپریم کورٹ نے جج ،پراسیکیوٹر جنرل نیب کی تعیناتی نہ ہونے پر وفاقی حکومت سے ...

اسلام آباد(آن لائن)سپریم کورٹ نے مضاربہ سکینڈل کے ملز موں کی درخواست ضمانت پر سماعت کے دوران پراسیکیوٹر جنرل نیب کی تعیناتی نہ ہونے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت پیر تک ملتوی کر دی، عدالت نے حکم دیا کہ بتایا جائے احتساب عدالت کے جج اور پراسیکیوٹر جنرل نیب کی تعیناتی کے حوالے سے کیا اقدامات کیے ۔جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں دو رکنی بینچ نے کیس کی سماعت کی، دوران سماعت ملز موں کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ میرے موکلان جیل میں ہیں،احتساب عدالت نمبر2 کے جج کا عہدہ ستمبر 2017 سے خالی ہے، جسٹس گلزار احمد نے استفسار کیا کہ احتساب عدالت کے جج کی تقرری کیوں نہیں ہوئی جس پر نیب کے وکیل نے کہا کہ احتساب عدالت کے جج کی تقرری وفاقی حکومت نے کرنی ہے،پراسیکیوٹر جنرل کی تقرری بھی وفاقی حکومت نے نہیں کی،تقرریاں نہ ہونے سے نیب کو مشکلات کا سامنا ہے ،نیب احتساب عدالت نمبر 1 کے دوسرے جج بھی مارچ میں ریٹائر ہورہے ہیں۔عدالت نے نیب وکیل کی جانب سے اٹھائے گئے نکات پر اٹارنی جنرل کونوٹس جاری کرتے ہوئے کہا کہ بتایا جائے احتساب عدالت کے جج اور پراسیکیوٹر کی تقرری کے حوالے سے کیا اقدامات کئے گئے ہیں اوراٹارنی جنرل نیب وکیل کی جانب سے اٹھائے گئے نکات پر جواب دیں۔

مزید : کراچی صفحہ اول