ایلوپیتھک میڈیسن آرڈیننس 1962کوکوہاٹ ڈویژن تک توسیع دی ہے،خالد الیاس

ایلوپیتھک میڈیسن آرڈیننس 1962کوکوہاٹ ڈویژن تک توسیع دی ہے،خالد الیاس

پشاور( سٹاف رپورٹر)ڈپٹی کمشنر کوہاٹ خالد الیاس نے مقامی تاجر برادری کو یقین دلایا ہے کہ نہ انتظامیہ اپنے قانونی مینڈیٹ سے تجاوز کرے گی اور نہ ہی کسی اور کو قانون ہاتھ میں لینے کی اجازت دی جائے گی۔انہوں نے واضح کیا کہ عطائی ڈاکٹروں،جعلی ادویات،زائد المیعادادویات اور اشیائے خوردونوش،مہنگائی اور غیر قانونی تجاوزات کے خلاف آپریشن بلاتعطل جاری رہے گا۔انہوں نے وارننگ دی کہ زائد المیعاد اشیاء فی الفور تلف کی جائیں کیونکہ اس سلسلے میں کسی کے ساتھ کوئی نرمی نہیں ہوگی۔یہ یقین دہانی انہوں نے کوہاٹ شہر میں تاجر برادری کے لئے منعقدہ کھلی کچہری سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر ضلع ناظم کوہاٹ نسیم آفریدی،تحصیل ناظم ملک تیمور، ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر صاحبزادہ نجیب اللہ،ایس پی آپریشن جمیل احمد، ایڈیشنل اسسٹنٹ کمشنرز صاحبزادہ سمیع اللہ، طاہر علی اور عباس آفریدی اور قومی تعمیر نو محکموں کے حکام کے علاوہ تاجروں کی مختلف تنظیموں کے صدور، نمائندوں اور عام لوگوں کی کثیر تعداد بھی موجود تھی۔تاجروں نے اپنے مطالبات پیش کرنے کے علاوہ کوہاٹ میں جاری آپریشن اور چھاپوں پر تحفظات کا اظہارکیا۔ڈپٹی کمشنر نے خود اور متعلقہ محکموں کے سربراہوں نے اس سلسلے میں مفصل جوابات دیئے اور ان کے تحفظات ترجیحی بنیادوں پر دورکرنے کی یقین دہانی کرائی تاہم انہوں نے تاجر برادری کو بھی عوام کے حقوق کاخیال رکھنے کی تاکیدکی۔ڈپٹی کمشنر نے کہا کہ حکومت خیبر پختونخوا نے تجرباتی بنیادپر ایلوپیتھک میڈیسن آرڈیننس 1962کوکوہاٹ ڈویژن تک توسیع دی ہے اور کامیابی کی صورت میں اسے پورے صوبے تک وسعت دی جائے گی۔انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ یہ کیسے ممکن ہے کہ ایک ٹیکنیشن انفرادی طور پریا ڈاکٹر کی غیر موجودگی میں سپیشلسٹ ڈاکٹر کا کام کرے ؟اگر ایسا غیرقانونی کام ہو گا تو ایکشن ضرور لیا جائے گا۔زائدالمیعاد اشیاء سے متعلق خالد الیاس نے کہا کہ انہیں علیحدہ کاٹن میں بندکرکے رکھا جائے نہ کہ شوکیس میں۔انہوں نے ٹی ایم اے کو ہدایت کی کہ آئندہ پارکنک کے بغیر پلازہ کا نقشہ کسی صورت پاس نہ کیاجائے جبکہ سستا بازار اورشہرکے دیگرعلاقوں میں کیبن وغیرہ صرف قومی شناختی کارڈ رکھنے والوں کو الاٹ کئے جائیں۔

مزید : پشاورصفحہ آخر