سول کورٹ کے ملازمین کا وکلاءگردی کے خلاف ہائی کورٹ کے باہر احتجاج ،اندراج مقدمہ کے لئے تھانے پہنچ گئے

سول کورٹ کے ملازمین کا وکلاءگردی کے خلاف ہائی کورٹ کے باہر احتجاج ،اندراج ...
سول کورٹ کے ملازمین کا وکلاءگردی کے خلاف ہائی کورٹ کے باہر احتجاج ،اندراج مقدمہ کے لئے تھانے پہنچ گئے

  

لاہور(نامہ نگار)سول کورٹ کے ملازمین نے وکلاءگردی کے خلاف احتجاج آج 5جنوری تک ملتوی کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ عدالتی ملازمین پر تشدد کرنے والے وکلاءکے خلاف انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت مقدمہ کے اندراج تک ان کااحتجاج جاری رہے گا ۔

سول کورٹ ایل ڈی اے عمارت میں واقع سول جج ممتاز احمد مغل کے اہلمد عزیر اور نائب قاصد علی رضا کو وکلاءکی جانب سے کیس کی تصدیق شدہ نقل فوری طور پر فراہم نہ کرنے کے معاملے پر مبینہ طور پرتشدد کا نشانہ بنایا گیا جس پر عدالتی ملازمین نے احتجاج کیا اور لاہور کی تمام عدالتوں میں کام چھوڑ دیا، عدالتی ملازمین احتجاج کرتے ہوئے عدالت عالیہ کے ججز گیٹ کے پاس پہنچے تو سیشن جج لاہور عابد حسین قریشی، سینئر سول جج ایڈمن لاہور شکیب عمران قمر اور دیگر سول ججز احتجاجی ملازمین کو مطالبات کے حق میں احتجاج ختم کروانے پہنچ گئے، سیشن جج لاہور نے احتجاجی ملازمین کو یقین دہانی کروائی عدالتی ملازمین کو تشدد کا نشانہ بنانے والے وکلاءکے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کی جائے گی جس پر تشدد کا نشانہ بننے والے عدالتی ملازمین عزیر اور علی رضا پولیس کی ہمراہ اسلام پورہ تھانے میں پہنچے اور وکلاءکے خلاف اندارج مقدمہ کی درخواست دی ،عدالت عالیہ کے ججز گیٹ پر دھرنا دیئے بیٹھے ملازمین نے سینئر سول جج کی یقین دہانی پر احتجاج 4جنوری تک ملتوی کرتے ہوئے عندیہ دیا ہے کہ اگر وکلاءکے خلاف انسداد دہشت گردی کی دفعات کے تحت مقدمہ درج نہ کیا گیا تو دوبارہ قلم چھوڑ ہڑتال کریں گے۔

لائیو ٹی وی دیکھنے کے لئے اس لنک پر کلک کریں

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور